کچھ لوگ سیکولرازم کو خطرے میں ڈال رہے ہیں: نواب ملک

نواب ملک نے کہا کہ ہمارے ساتھ ہی دیگر کئی ممالک آزاد ہوئے لیکن ان ممالک میں جمہوریت قائم نہیں رہ سکی۔ اس بات سے انکار نہیں کیا جاسکتا کہ ہمارے ملک میں جمہوریت کی برقراری ہمارے آئین کی مضبوطی واستحکام کی وجہ ہے۔

ممبئی: جمہوریت کو غلط پیرائے میں استعمال کرتے ہوئے آج ملک میں جمہوریت کو منفی طور پر پیش کیا جارہا ہے۔ ذات پات کے نام پر ناانصافی کی جارہی ہے۔ مذہب کے نام پر لنچنگ ہورہی ہے۔

آئین مخالف ماحول پیدا کرکے کچھ لوگ آج ملک میں سیکولرازم کو خطرے میں ڈال رہے ہیں۔ یہ باتیں آج یہاں این سی پی کے قومی ترجمان واقلیتی امور کے وزیر نواب ملک نے یومِ آئین کے موقع پر ممبئی این سی پی کے سماجی انصاف شعبے کی جانب سے منعقدہ ایک پروگرام میں خطاب کے دوران کہیں۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر باباصاحب امبیڈکر نے آج کے ہی دن ملک کا آئین پیش کیا تھا جس میں اس بات کی ضمانت دی گئی ہے کہ بھارت ایک جمہوری اور سوشلسٹ وسیکولر ملک رہے گا۔ آئین میں ترمیم کی جاسکتی ہے لیکن یہ ترمیم بھی آئین کے ہی مطابق ہونی چاہئے نیز آئین میں ترمیم کا اختیار حکومت کو ہے۔

لیکن آئین کی بنیاد میں کوئی تبدیلی نہیں کی جاسکتی ہے جس کی صراحت بھی آئین میں موجود ہے۔

نواب ملک نے کہا کہ ہمارے ساتھ ہی دیگر کئی ممالک آزاد ہوئے لیکن ان ممالک میں جمہوریت قائم نہیں رہ سکی۔ اس بات سے انکار نہیں کیا جاسکتا کہ ہمارے ملک میں جمہوریت کی برقراری ہمارے آئین کی مضبوطی واستحکام کی وجہ ہے۔

جمہوریت میں سب کو برابر کے حقوق دئے گئے ہیں۔ایک جمہوری ملک میں حکمران آقا نہیں بلکہ خادم ہوتے ہیں اور ملک کے عوام ہی ملک چلانے کے لیے نظام کا انتخاب کرتے ہیں۔

نواب ملک نے کہا کہ آئین کے ذریعے معاشرے میں معاشی عدم مساوات کو ختم کرنا حکومت کا کام ہے۔ لیکن آج 11 فیصد لوگ ملک کی 90 فیصد دولت کے مالک ہیں اور 90 فیصد کے پاس محض 10 فیصد دولت ہے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.