اومیکرون ہندوستان پہنچ گیا‘ کرناٹک میں 2 کیس

وزارت صحت کے جوائنٹ سکریٹری لو اگروال نے اپنی ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ دونوں کیسس کی اطلاع کرناٹک سے دی گئی ہے۔ 66 سال اور 46 سال کے 2 افراد وائرس کی اس قسم سے متاثر پائے گئے ہیں۔

بنگلورو: وزارت صحت نے آج کہا کہ ہندوستان میں کووِڈ 19 کے 2 کیسس میں اومیکرون ویرینٹ پایا گیا ہے اور یہ دنیا کا 30 واں ملک بن گیا ہے جہاں کورونا وائرس کی یہ قسم پائی گئی ہے جس کی وجہ سے عالمی سطح پر چوکسی برتی جارہی ہے۔ وزارت صحت کے جوائنٹ سکریٹری لو اگروال نے اپنی ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ دونوں کیسس کی اطلاع کرناٹک سے دی گئی ہے۔ 66 سال اور 46 سال کے 2  افراد وائرس کی اس قسم سے متاثر پائے گئے ہیں۔ ان کی نجی زندگی کا تحفظ کرنے فی الحال ان کی شناخت ظاہر نہیں کی جائے گی۔

 ذرائع کے مطابق  66 سالہ شخص ایک بیرونی شہری ہے جس نے جنوبی افریقہ کا سفر کیا تھا جبکہ 46سالہ شخص بنگلورو کا ہیلت ورکر ہے۔ دونوں کے رابطہ میں آنے والے تمام افراد کا پتہ چلالیا گیا ہے اور ان کا معائنہ کیا جارہا ہے۔ لو اگروال نے بتایا کہ دونوں میں معمولی علامات ہیں اور اومیکرون کا پتہ چلنے سے دہشت زدہ ہونے کی ضرورت نہیں تاہم بیداری برتنا انتہائی ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ کووِڈ طرزِ عمل اختیار کریں اور ہجوم سے بچیں۔ ابتدائی علامات سے پتہ چلتا ہے کہ اومیکرون جس کی کئی شکلیں ہیں‘ پچھلی قسموں سے زیادہ متعدی ہوگا لیکن اس قسم کے زیادہ مہلک ہونے کے ابھی تک کوئی ثبوت نہیں ملے ہیں۔

مرکز کی کووِڈ 19 ٹاسک فورس کے صدر ڈاکٹر وی کے پال نے بتایا کہ فی الحال کوئی سخت پابندیاں عائد نہیں کی جائیں گی۔ صورتِ حال کافی حد تک قابو میں ہے۔ ہندوستان  15 دسمبر سے کمرشیل بین الاقوامی پروازیں شروع کرنے والا تھا لیکن چہارشنبہ کے دن اس منصوبہ کو منسوخ کردیا گیا۔ حکومت نے ریاستوں کو مشورہ دیا ہے کہ وہ معائنوں میں اضافہ کردیں۔ معائنوں میں کمی کے سبب وباء پر قابو پانے ہندوستان کی کوششیں غیرموثر ہوسکتی ہیں۔ اپریل اور مئی کے مہینوں میں کورونا کیسس اور اموات کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ ہوا تھا جس کے بعد اب ہندوستان میں ان کی تعداد میں قابل لحاظ کمی آئی ہے۔ یہاں ڈیلٹا ویرینٹ کا غلبہ تھا۔

ملک میں جمعرات کے روز کورونا کے 9765 نئے کیسس کی اطلاع دی گئی جس کے ساتھ ہی کیسس کی مجموعی تعداد 34.61 ملین ہوگئی ہے۔ صرف امریکہ میں اس سے زیادہ کیس رونما ہوئے ہیں۔ علیحدہ اطلاع کے بموجب انڈین کونسل آف میڈیکل ریسرچ (آئی سی ایم آر) کے ڈائرکٹر جنرل بلرام بھارگو نے بتایا کہ کرناٹک میں جینوم سیکوینسنگ کے بعد اومیکرون کے 2کیس پائے گئے ہیں۔ دونوں  افراد نے جنوبی افریقہ کا سفر کیا تھا۔

بھارگو نے بتایا کہ وزارت صحت کی جانب سے قائم کردہ 37 لیباریٹریز کے کنسورشیم آئی این ایس اے سی او جی کی جینوم سیکوینسنگ کی کوششوں سے کرناٹک میں اومیکرون کے 2 کیسس کا پتہ چلایا گیا ہے۔ ہمیں دہشت زدہ ہونے کی ضرورت نہیں تاہم شعور بیداری انتہائی ضروری ہے۔ کووِڈ سے بچنے کا مناسب رویہ بھی اختیار کیا جانا چاہئے۔ وزارت صحت کے ترجمان نے کہا کہ دنیا بھر میں کیسس میں اضافہ دیکھا جارہا ہے اور صرف یوروپ میں گزشتہ ایک ہفتہ کے دوران 70  فیصد کیسس پائے گئے ہیں۔

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.