داعش کی آن لائن میگزین میں بھگوان شیو کے سرکٹے مجسمہ کا پوسٹر

۔ انشل سکسینہ نے ریاستی اور مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اسلامک اسٹیٹ کی میگزین میں سر کٹی تصویر کی اشاعت کے پس منظر میں مردیشور ٹاؤن میں سیکوریٹی بڑھانے کے اقدامات کرے۔ اس اپیل کے بعد ریاستی حکومت نے مردیشور مندر کی سیکوریٹی بڑھادی۔

اتراکنڑا (کرناٹک): دہشت گرد تنظیم اسلامک اسٹیٹ/ داعش کی ہندوستان پر مرکوز آن لائن پروپگنڈہ میگزین کی ایک حالیہ پوسٹ وائرل ہوئی اور اس نے کرناٹک کے فرقہ وارانہ لحاظ سے حساس ساحلی ضلع اتراکنڑا کی صورتِ حال کشیدہ کردی۔ خود ساختہ تجزیہ نگار اور مبصر انشل سکسینہ نے ٹویٹر پر ایک امیج شیئر کی۔ میگزین پوسٹر میں بھگوان شیو کی سر کٹی مورتی کی تصویر ہے۔

پوسٹر میں یہ بھی دکھایا گیا کہ سر کی جگہ اسلامک اسٹیٹ کے پرچم نے لے لی ہے۔ پوسٹر میں جو مورتی یا مجسمہ دکھایا گیا ہے وہ ضلع اتراکنڑا کے بیچ ٹاؤن کہلانے والے مرودیشور میں واقع بھگوان شیو کے 123 فیٹ بلند مشہور مجسمہ جیسا لگتا ہے۔ مرودیشور‘ یاتری استھل اور بڑا سیاحتی مقام بھی ہے۔پوسٹر میں تصویر کے نیچے دعویٰ کیا گیا ہے کہ جھوٹے خداؤں کو توڑنے کا وقت آگیا ہے۔ انشل سکسینہ کی شیئر پوسٹ وائرل ہوگئی۔

 ہندوتنظیمیں اس پر برہم ہیں۔ انشل سکسینہ نے ریاستی اور مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اسلامک اسٹیٹ کی میگزین میں سر کٹی تصویر کی اشاعت کے پس منظر میں مردیشور ٹاؤن میں سیکوریٹی بڑھانے کے اقدامات کرے۔ اس اپیل کے بعد ریاستی حکومت نے مردیشور مندر کی سیکوریٹی بڑھادی۔ مردیشور‘ کوسٹل ٹاؤن‘ بھٹکل ٹاؤن کے بے حد قریب واقع ہے۔ بھٹکل پر قوم دشمن سرگرمیوں کے لئے ہندوستانی انٹلیجنس ایجنسیوں کی ہمیشہ نظر رہتی ہے۔ یٰسین بھٹکل اور دیگر دہشت گردوں کا تعلق اسی شہر سے ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.