کلبرگی بلدی انتخابات، بی جے پی اور جنتا دل سیکولر میں اتحاد کا امکان

جے ڈی (ایس) قانون سازوں کے ایک وفد نے سابق چیف منسٹر ایچ ڈی کمار سوامی کی قیادت میں پیر کو بومئی سے ملاقات کی اور اس قیاس آرائی کو جنم دیا کہ لوگوں نے کلبرگی اور ہبلی دھارواڑ بلدیاتی انتخابات میں معلق فیصلے دئیے ہیں۔

بنگلور: بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) اور جنتا دل (ایس) کے درمیان کرناٹک کے کلبرگی میونسپل کارپوریشن میں اکثریت حاصل کرنے کیلئے اتحاد کے امکانات ہیں۔

دہلی دورے سے قبل چیف منسٹر بومئی نے کہا "جنتا دل (ایس) کے وفد کے ساتھ کوئی تفصیلی بات چیت نہیں ہوئی۔ میں نے ان سے کہا ہے کہ ہمیں مل کر کام کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ مقامی رہنما اس حوالہ سے تبادلہ خیال کریں گے اور فیصلہ کریں گے۔ جہاں تک ممکن ہو گا بی جے پی اور جے ڈی (ایس) اتحاد کو کلبرگی میونسپل کارپوریشن میں اکثریت ملے گی۔

جے ڈی (ایس) قانون سازوں کے ایک وفد نے سابق چیف منسٹر ایچ ڈی کمار سوامی کی قیادت میں پیر کو بومئی سے ملاقات کی اور اس قیاس آرائی کو جنم دیا کہ لوگوں نے کلبرگی اور ہبلی دھارواڑ بلدیاتی انتخابات میں معلق فیصلے دئیے ہیں۔

کلبرگی سٹی میونسپل کارپوریشن میں واضح اکثریت کے لیے بی جے پی کو 28 سیٹوں کے لیے مزید پانچ سیٹوں کی ضرورت ہے۔ اس سلسلہ میں بومئی کو ایک باغی بی جے پی اور چار جے ڈی (ایس) کونسلروں کی حمایت حاصل ہونے کی توقع ہے ، جو پارٹی کو اکثریت حاصل کرنے کی راہ ہموار کرے گی۔

ریاستی الیکشن کمیشن کے مطابق بی جے پی نے کلبرگی میونسپل کارپوریشن انتخابات میں 23 وارڈ جیتے ہیں۔ کانگریس نے 27 اور جے ڈی (ایس) نے چار اور ایک دیگر نے جیتا ہے۔ اسی طرح 82 رکنی ہبلی دھارواڑ میونسپل کارپوریشن میں بی جے پی نے 39 وارڈ ، کانگریس نے 33، آزاد نے چھ ، اے آئی ایم آئی ایم نے تین اور جے ڈی (ایس) نے ایک وارڈ جیتا ہے۔

بی جے پی کو ایچ ڈی ایم سی میں اکثریت کے لیے 42 نشستوں کی ضرورت ہے اور چیف منسٹر بومئی کو ایک آزاد اور جے ڈی (ایس) کونسلر سے حمایت کی توقع ہے۔

(یواین آئی)

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.