آئی ایس آئی‘ دہشت گردوں کو جموں وکشمیر بھیج رہی ہے:انٹلیجنس

تازہ ترین انٹلیجنس اطلاعات کے مطابق حال ہی میں افغانستان کی جیلوں سے رہاشدہ یہ کیڈرس پاکستان واپس ہوچکے ہیں اور اب آئی ایس آئی نے انہیں اپنے دہشت گردی ایجنڈہ پر عمل آوری کی ہدایت دی ہے۔

نئی دہلی:  پاکستانی خفیہ ایجنسی (آئی ایس آئی)‘ جموں وکشمیر پر اپنی ناپاک نظر رکھتے ہوئے اسلامک اسٹیٹ صوبہ خراسان (آئی ایس کے پی) کیڈر کو پاک مقبوضہ کشمیر بھیج رہی ہے تاکہ جموں وکشمیر پر بڑی ضرب لگائی جاسکے۔

تازہ ترین انٹلیجنس اطلاعات کے مطابق حال ہی میں افغانستان کی جیلوں سے رہاشدہ یہ کیڈرس پاکستان واپس ہوچکے ہیں اور اب آئی ایس آئی نے انہیں اپنے دہشت گردی ایجنڈہ پر عمل آوری کی ہدایت دی ہے۔

ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ کشمیر کی سیکوریٹی ایجنسیوں نے ان کی نقل و حرکت اور آئی ایس کے پی کے ”کمانڈر منصب“کی موجودگی کا پتہ چلایا ہے جو اس مقصد کے لئے مختلف دہشت گرد تنظیموں کے ساتھ ربط ضبط بڑھارہا ہے۔ وہ گزشتہ چند ماہ سے سوشل میڈیا پر کافی سرگرم رہا ہے۔

کیرالا کے تقریباً 25 نوجوان حال ہی میں افغانستان سے واپس ہوئے ہیں ور انہوں نے آئی ایس کے پی کیڈر میں شمولیت اختیار کرلی ہے۔ اب یہ اطلاعات موصول ہورہی ہیں کہ آئی ایس آئی ہندوستان میں حملے کرانے کیرالا کے ان ریاڈیکل نوجوانوں کا استعمال کرسکتی ہے۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ ان کی نقل وحرکت‘ آئی ایس آئی کے راڈار پر ہے۔ افغانستان پر طالبان کے قبضہ کے بعد آئی ایس آئی گزشتہ 2ماہ سے اپنی تربیت شدہ اور مددیافتہ دہشت پسند تنظیموں جیسے جیش محمد‘ لشکر طیبہ اور البدرکو اس مرکزی زیرانتظام علاقہ میں ڈھکیلنے کی کوششوں میں مصروف ہے اور اب خط ِ قبضہ سے متصل پاک مقبوضہ کشمیر میں مختلف لانچ پیاڈس پرآئی ایس کے پی کے انتہاپسندوں کو جمع کیا جارہا ہے۔

انٹلیجنس ایجنسیوں کے ذرائع نے یہ بھی انکشاف کیا کہ سرحد کے قریب پاکستانی علاقہ میں لانچ پیاڈس پر سرگرمیاں بڑھ گئی ہیں جن سے دراندازی کی منصوبہ بندی میں اضافہ کا اشارہ ملتا ہے۔

جاریہ سال فروری میں لڑائی بندی کے اعلان کے بعد ان لانچ پیاڈس کا استعمال ترک کردیا گیا تھا۔ ہندوستانی سیکوریٹی ایجنسیوں کو یہ بھی اطلاع ملی ہے کہ پاک مقبوضہ کشمیر میں واقع چند دہشت گرد کیمپوں میں پشتون زبان بولنے والے بعض دہشت گرد بھی جمع ہیں جس کی روشنی میں جموں وکشمیر کے سرحدی علاقوں کے قریب واقع ان کیمپوں میں آئی ایس کے پی کے انتہاپسندوں کی موجودگی کے امکانات بڑھ گئے ہیں۔

ایک سینئر عہدیدار نے بتایا کہ جموں وکشمیر پولیس‘ اوور گراؤنڈ دہشت گردوں کا پتہ چلانے کی ہر ممکن کوشش کررہی ہے جو بیرونی دہشت گردوں کو پناہ دے سکتے ہیں اور ان کی مدد کرسکتے ہیں۔ پولیس مستقل طورپر یہ کوشش کررہی ہے کہ دراندازی کرنے والے دہشت گردوں کو جموں وکشمیر کے دیہاتوں میں جگہ نہ ملے اور وہ کوئی ٹھکانہ تلاش نہ کرسکیں۔

سی آر پی ایف کے ڈائرکٹر جنرل کلدیپ سنگھ اور جموں وکشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے دہشت گردی کو بالکل برداشت نہ کرنے کی بات دُہراتے ہوئے کہا کہ سیکوریٹی فورسس انتہائی چوکسی برت رہی ہیں اور سیکوریٹی صورتِ حال سے نمٹنے تیار ہیں۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.