اسرائیل کی جارحانہ سرگرمیوں سے دو ریاستی حل کی راہ میں رکاوٹ: محمود عباس

محمود عباس نے انتباہ دیا ہے کہ اگر اسرائیل کی جارحانہ کاروائیاں برقرار رہیں تو اس سے دو ریاستوں کے حل میں بڑی رکاوٹ پیدا ہوگی اور یکسوئی کی راہ ہموار نہیں ہوسکے گی۔

فلسطین کے صدر محمود عباس کی امریکی نمائندے تھامس گرین فلیڈ سے بات چیت
رملہ: فلسطین کے صدر محمود عباس نے امریکہ کے سفیرایس لنڈاتھامس گرین فیلڈ سے اسرائیل – فلسطین تنازعہ کی یکسوئی کے تعلق سے بات چیت کی ہے۔یہ بات خبررساں ادارہ ژنہوا نے سرکاری ذرائع کے حوالہ سے بتائی۔

ادارہ نے مزید بتایا ہے کہ اقوام متحدہ میں امریکی مندوب تھامس گرین فیلڈ سے صدر فلسطین محمود عباس نے تفصیلی طورپر بات چیت کرتے ہوئے تنازعہ کی یکسوئی کی راہ ہموار کرنے پر زور دیا ہے۔

یہ بات چیت جوکہ چہارشنبہ کو ہوئی اس موقع پر محمود عباس نے انتباہ دیا ہے کہ اگر اسرائیل کی جارحانہ کاروائیاں برقرار رہیں تو اس سے دو ریاستوں کے حل میں بڑی رکاوٹ پیدا ہوگی اور یکسوئی کی راہ ہموار نہیں ہوسکے گی۔

انہوں نے کہا کہ فلسطینی علاقوں میں اسرائیل کی سرگرمیاں جاری ہیں اور اسرائیل کی جانب سے فلسطینیوں پر مظالم ڈھائے جارہے ہیں جس کی وجہ علاقہ کی صورتحال دن بدن ابتر ہوتی جارہی ہے۔

انہوں نے امریکی نمائندہ کے ساتھ اپنے دفتر میں یہاں بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اگر اسرائیل اپنے رویہ میں تبدیل نہ کریں تو دو ریاستوں کے تحت تنازعہ کی یکسوئی ممکن نہیں ہوسکے گی اور اس کو شدید دھکہ لگے گا۔

صدر فلسطین نے امریکی نمائندے کو اسرائیل کی قابل اعتراض سرگرمیوں سے واقف کرواتے ہوئے کہا کہ رملہ کی جانب سے فلسطینیوں کو 6 جماعتوں میں تقسیم کرنے اور غیر سرکاری تنظیموں کو دہشت گرد گروپس قراردیتے ہوئے اسرائیل کے فیصلہ کومسترد کردیا ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.