جادھو کو درخواست نظرثانی کے حق کیلئے پاکستانی پارلیمنٹ میں قانون وضع

ہندوستانی بحریہ کے ریٹائرڈ عہدیدار جادھو کو پاکستان کی ایک فوجی عدالت نے اپریل 2017 میں جاسوسی کے الزام میں سزائے موت سنائی تھی۔

اسلام آباد: پاکستانی پارلیمنٹ نے آج اپنے اجلاس میں ایک قانون وضع کیا تاکہ سزائے موت کے ہندوستانی قیدی کلبھوشن جادھو کو ایک فوجی عدالت کی جانب سے سنائی گئی سزائے موت کے خلاف درخواست نظر ثانی داخل کرنے کا حق دیا جاسکے۔

ہندوستانی بحریہ کے ریٹائرڈ عہدیدار جادھو کو پاکستان کی ایک فوجی عدالت نے اپریل 2017 میں جاسوسی کے الزام میں سزائے موت سنائی تھی۔

پاکستان کی جانب سے جادھو تک قونصلر رسائی دینے سے انکار کے خلاف ہندوستان بین الاقوامی عدالت انصاف سے رجوع ہوا تھا اور اس کی سزائے موت کو بھی چیلنج کیا گیا تھا۔

دی ہیگ میں قائم بین الاقوامی عدالت انصاف نے فریقین کے دلائل کی سماعت کے بعد جولائی 2019 میں فیصلہ سنایا تھا اور پاکستان سے کہا تھا کہ ہندوستان کو جادھو تک قونصلر رسائی دے اور اس کی سزائے موت پر نظر ثانی کو یقینی بنائے۔

چہارشنبہ کے روز سینیٹ اور قومی اسمبلی کے ارکان پر مشتمل مشترکہ اجلاس طلب کیا گیا تھا تاکہ ان قوانین کو منظوری دی جاسکے جنہیں جاریہ سال جون میں قومی اسمبلی میں منظوری دے دی تھی۔

ان میں ایک قانون جادھو کو اپنی سزائے موت کے خلاف اپیل کے قابل بنانے کا بھی تھا۔ تاہم اس وقت ایوان بالا نے ان قوانین کو منظوری نہیں دی تھی۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.