کووڈ ٹیکے لینے والوں میں دوبارہ قوت مدافعت پیدا نہیں ہوسکتی

برطانیہ کی سلامتی صحت ایجنسی نے اپنی ویک 42 ”کووڈ۔19 ویکسین پر نظر رکھنے کی رپورٹ“ میں صفحہ نمبر 23 پر یہ اعتراف کیا ہے ”جن افراد کو ٹیکہ کی دو خوراکیں لینے کے بعد انفیکشن ہوجاتا ہے ان میں این اینٹی باڈی لیول گرجاتا ہے“۔

لندن: حکومت برطانیہ نے اس ہولناک سچائی کو منظر عام پر لایا ہے کہ اگر آپ ایک بار ووہان کورونا وائرس (کووڈ۔19) کے لئے ٹیکے لے لیں گے، آپ کبھی بھی دوبارہ مکمل قدرتی قوت مدافعت حاصل کرنے کے قابل نہیں رہیں گے۔

برطانیہ کی سلامتی صحت ایجنسی نے اپنی ویک 42 ”کووڈ۔19 ویکسین پر نظر رکھنے کی رپورٹ“ میں صفحہ نمبر 23 پر یہ اعتراف کیا ہے ”جن افراد کو ٹیکہ کی دو خوراکیں لینے کے بعد انفیکشن ہوجاتا ہے ان میں این اینٹی باڈی لیول گرجاتا ہے“۔

اس نے وضاحت کی کہ اینٹی باڈی کی یہ کمی بنیادی طور پر مستقل ہوجاتی ہے۔

نیچرل نیوز کے بموجب الیکس بیرنسن نے تحریر کیا ”اس کا کیا مطلب ہے؟ کئی چیزیں ہیں، سب کی سب بری و خراب ہیں“۔ ”ہم جانتے ہیں کہ ٹیکوں سے نہ تو انفیکشن رکتا ہے اور نہ ہی وائرس کی منتقلی کی روک تھام ہوتی ہے (درحقیقت، رپورٹ سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ جو بالغ افراد ٹیکے لے لیتے ہیں ان افراد کے مقابلہ میں انفیکشن سے زیادہ متاثر ہوجارہے ہیں جنہوں نے ٹیکہ اندازی سے استفادہ نہیں کیا ہے اور ٹیکے نہیں لئے ہیں)۔

خدا پر بھروسہ رکھیں، بڑے سے بڑے فارما پر بھروسہ نہ کریں۔

یہ وہ بات ہے جس کے بارے میں ہم خبردار کررہے ہیں۔ دو حقیقتیں ہیں جو بیک وقت ہورہی ہیں۔ دوسرے الفاظ میں، ایک حقیقت یہ ہے کہ جو افراد ٹیکے نہیں لے رہے ہیں وہ قوتِ مدافعت کے ساتھ خدا پر بھروسہ کررہے ہیں اور دوسرے لوگ جو مکمل ٹیکہ اندازی سے استفادہ کررہے ہیں سائنس پر بھروسہ کررہے ہیں۔

اِن دونوں حقیقتوں میں سے ایک حقیقت صحیح ہے اور وہ یہ ہے کہ جو لوگ ٹیکے لے رہے ہیں ان کی قوت مدافعت کو مستقل طور پر نقصان پہنچ رہا ہے۔ جو لوگ ٹیکہ اندازی سے استفادہ نہیں کررہے ہیں ان کی قدرتی قوتِ مدافعت اچھی رہ رہی ہے اور وہ وائرس کے حملہ سے کامیابی کے ساتھ سامنا کرنے کے قابل ہیں۔

یہ سادہ سی بات ہے کہ بیشتر افراد کے لئے جن میں کوئی علامات ظاہر نہیں ہوئی ہیں وائرس کے لئے انجکشن لینے کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ کووڈ انجکشن دہشت ناک خواب کے بارے میں بیرنسنس بلاگ پر ایک تبصرہ نگار نے تحریر کیا ہے ”یہ بنی نوع انسان کی تاریخ میں سب سے بڑا اسکام ہے“۔

ذریعہ
ایجنسیز

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.