اسرائیل کے اشتراک سے متحدہ عرب امارات اور بحرین کی پہلی مشترکہ بحری مشقیں

امریکی بحریہ کی سینٹرل کمان کے سربراہ، وائس ایڈمرل بریڈ کوپر نے کہا ہے کہ یہ امر خوشی کا باعث ہے کہ علاقائی پارٹنرز کے ساتھ مل کر بحری نوعیت کی استعداد بڑھانے کی مشق کی جا رہی ہے۔

یروشلم: اسرائیل کے اشتراک کے ساتھ پہلی بار متحدہ عرب امارات اور بحرین مشترکہ بحری مشقیں کر رہے ہیں۔ اس سے ایک ہی سال قبل متحدہ عرب امارات اور بحرین نے اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات استوار کیے تھے۔ یہ بات امریکی بحریہ کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہی گئی ہے۔

اس میں بتایا گیا ہے کہ یہ پانچ روزہ مشقیں بحیرہ احمر میں کی جا رہی ہیں، یہ سمندری علاقہ سوئیز کینال کو بحیرہ روم کو ملاتا ہے۔ بیان کے مطابق، ان مشقوں کا مقصد شریک ملکوں کی بحریہ کی باہمی کارکردگی کی استعداد بڑھانا ہے۔

امریکی بحریہ کی سینٹرل کمان کے سربراہ، وائس ایڈمرل بریڈ کوپر نے کہا ہے کہ یہ امر خوشی کا باعث ہے کہ علاقائی پارٹنرز کے ساتھ مل کر بحری نوعیت کی استعداد بڑھانے کی مشق کی جا رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ جہاز رانی کے میدان میں تعاون سمندری جہازوں کی آزادانہ نقل و حمل اور تجارت کے فروغ کے لیے تحفظ کا باعث بنتا ہے، جو علاقائی سلامتی اور استحکام کے لیے بہت ضروری ہے۔

ان مشقوں کا آغاز بدھ کے روز ہوا ایسے میں جب ‘یو ایس ایس پورٹ لینڈ’ بحری بیڑا علاقے میں موجود ہے۔ مشقوں میں لنگراندازی، تلاش کا کام اور قزاقوں کو پکڑنے کی تربیت شامل ہے۔ یہ امریکی سمندری بیڑا بحری اور بَری سطح پر چل سکتا ہے، جسے ٹرانسپورٹ ڈاک لینڈنگ شپ کا نام دیا جاتا ہے۔

ذریعہ
اے پی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.