سیف الاسلام قذافی، صدارتی انتخاب میں حصہ لینے کیلئے نااہل

سیف الاسلام قذافی آئندہ ماہ مقرر صدارتی الیکشن میں حصہ لینے کے خواہاں تھے لیکن لیبیا کی اعلیٰ انتخابی کمیٹی نے سیف الاسلام قذافی پر ماضی میں سرزد ہونے والے جرائم کے تناظر میں انہیں ان انتخابات میں حصہ لینے سے روک دیا۔

بن غازی: لیبیا کی اعلیٰ ترین قومی انتخابی کمیٹی نے مرحوم معمر قذافی کے لڑکے سیف الاسلام قذافی کو صدارتی انتخابات میں حصہ لینے کے لئے نااہل قراردے دیا۔

سیف الاسلام قذافی آئندہ ماہ مقرر صدارتی الیکشن میں حصہ لینے کے خواہاں تھے لیکن لیبیا کی اعلیٰ انتخابی کمیٹی نے سیف الاسلام قذافی پر ماضی میں سرزد ہونے والے جرائم کے تناظر میں انہیں ان انتخابات میں حصہ لینے سے روک دیا۔ بہرحال انہیں اس فیصلہ کے خلاف اپیل کرنے کا حق دیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ سابق ڈکٹیٹر معمر قذافی کے لڑکے سیف الاسلام قذافی کو 2015 میں طرابلس کی ایک عدالت نے سزائے موت سنائی تھی لیکن اس سزا پر سوالات اٹھائے گئے تھے۔ لیبیا میں صدارتی انتخابات کا پہلا مرحلہ 24 دسمبر کو مقرر ہے۔ اقوام متحدہ کی زیرقیادت ملک میں خانہ جنگی کے خاتمہ اور جمہوری حکومت کے قیام کے لئے انتخابات منعقد کئے جارہے ہیں۔

سیف الاسلام قذافی‘ انسانیت کے خلاف جرائم کے الزام میں بین الاقوامی فوجداری عدالت کو بھی مطلوب ہیں۔اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب برائے لیبیا نے انتخابات سے متعلق اندیشوں میں اضافہ کرتے ہوئے گزشتہ ہفتہ اپنے عہدہ سے استعفیٰ دے دیا تاہم کل انہوں نے کہا کہ اگر انتخابات کے لئے ان کی ضرورت ہے تو وہ عہدہ پر برقرار رہنے تیار ہیں۔

2011 میں معمر قذافی کی معزولی اور ہلاکت کے بعد سے تیل کی دولت سے مالامال لیبیا میں گزشتہ 10 سال حریف حکومتیں قائم رہیں۔ ایک دارالحکومت تریپولی میں اور دوسری حکومت ملک کے مشرقی علاقہ میں قائم تھی۔

خانہ جنگی میں شامل فریقین کو ترکی‘ روس‘ شام اور دیگر علاقائی طاقتوں کے نمائندوں اور بیرونی افواج کی حمایت حاصل تھی۔ سیف الاسلام نے 14 نومبر کو جنوبی ٹاؤن صبحہ میں اپنے کاغذات ِ نامزدگی داخل کئے تھے۔ کئی برسوں میں وہ پہلی مرتبہ منظرعام پر آئے تھے۔ سیف الاسلام نے جن کی عمر 49 سال ہے‘ لندن اسکول آف اکنامکس سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی ہے۔

ذریعہ
اے پی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.