سخت محنت اورعزم سے بھائی بہن نے والد کے خواب کوپورا کیا

واضح رہے کہ شیخ شبیر مرحوم کا تعلق ضلع ورنگل سے ہے اوروہ انتہائی غریب ہے۔ اپنی غربت کوبالائے طاق رکھتے ہوئے انہوں نے اپنے بچوں کوڈاکٹر بنانے کا خواب دیکھا تھا مگر وہ اپنے خواب کو پورا ہوتا ہوا دیکھنے کے لئے آج اس دنیا میں نہیں رہے ہیں۔

حیدرآباد: دنیا میں کچھ پانے کے لئے محنت ضروری ہے اورمحنت کبھی رائیگاں نہیں جاتی‘محنت کا پھل ہمیشہ اچھا ہی رہتا ہے۔محنت کرنے والوں کوکامیابی سے دورنہیں کیا جاسکتا۔

کامیابی خود چل کر محنتی لوگوں کے قدم چومتی ہے اوریہ مثل آج اُس وقت سچ ثابت ہوئی جب مالی پریشانیوں سے دوچار‘ دووقت کی روٹی کے لئے پریشان شیخ شعیب اوران کی ہمشیرہ ثانیہ نے اپنے مرحوم والد شیخ شبیر کے خواب جو اپنے دونوں بچوں کو ڈاکٹر بناناچاہتے تھے‘ کوسچ ثابت کرنے کی سمت پہلا کامیاب قدم بڑھایا۔

واضح رہے کہ شیخ شبیر مرحوم کا تعلق ضلع ورنگل سے ہے اوروہ انتہائی غریب ہے۔ اپنی غربت کوبالائے طاق رکھتے ہوئے انہوں نے اپنے بچوں کوڈاکٹر بنانے کا خواب دیکھا تھا مگر وہ اپنے خواب کو پورا ہوتا ہوا دیکھنے کے لئے آج اس دنیا میں نہیں رہے ہیں۔کورونا وباء کے دوران ان کا انتقال ہوگیا۔

تاہم ثانیہ اورشیخ شعیب کی سخت محنت‘لگن‘ جستجو مرحوم والد کے خواب کوپورا کیا۔ دونوں کوایم بی بی ایس میں داخلہ مل گیا۔ثانیہ کوکاکتیہ میڈیکل کالج میں داخلہ ملا جبکہ ان کے بھائی شیخ شعیب کو ضلع رنگا ریڈی کے معین آباد میں ایک خانگی میڈیکل کالج میں کنوینرکوٹہ کے تحت سیٹ حاصل ہوئی۔

دونوں بچوں کوڈاکٹر بننے کا خواب پورا کرنے کا بیڑا والدہ ظہیرہ بیگم نے اٹھایا۔ظہیرہ بیگم نے اپنے بچوں کے سلسلہ تعلیم کوجاری رکھنے کے لئے عوام سے مدد کی اپیل کی۔

ان کی داستان کو ایک تلگوروزنامہ میں شائع کیاگیا۔ تلگو روزنامہ میں شائع خبر پر کارگذار صدرٹی آر ایس اور ریاستی وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راؤ نے ردعمل ظاہر کرتے ہوئے ٹوئٹ کیا کہ وہ ثانیہ اورشیخ شعیب کی تعلیمی ضروریات کی تکمیل میں مکمل تعاون کریں گے۔

اس خبر پر فلاحی تنظیم صفابیت المال کے ذمہ داروں نے بھی ردعمل ظاہر کرتے ہوئے ظہیرہ بیگم سے ملاقات کی اوردونوں بھائی بہن کے تعلیمی اخرجات مکمل طورپر برداشت کرنے کی پیشکش کی تاہم ظہیرہ بیگم نے صفابیت المال کے ذمہ داروں کوبتایا کہ کے ٹی راماراؤ کی جانب سے دونوں بچوں کے چارسالہ ایم بی بی ایس کورس کی تکمیل کے لئے درکار رقم جاری کردی گئی ہے اوراب انہیں مزید پیسہ کی ضرورت نہیں ہے اورمستقبل میں ضرورت پڑنے پر وہ صفابیت المال سے ربط پیداکریں گی۔

کے ٹی راماراؤ کی انسانیت نوازی اور دوذہین بچوں کو اپنا خواب پورا کرنے کے لئے مالی مدد دینے کے فیصلہ کی ہر گوشہ سے ستائش کی جارہی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button