سری لنکا میں پارلیمنٹ کے ڈپٹی اسپیکر سمیت 40 ارکان پارلیمنٹ نے استعفیٰ دے دیا

راجا پکشے اور ان کے بھائی وزیر اعظم مہندا راجا پکشے نے استعفیٰ دینے سے انکار کر دیا ہے، حالانکہ حکومت کی کابینہ پہلے ہی مستعفی ہو چکی ہے۔ صدر نے اپوزیشن اپیل کی ہے کہ وہ قومی حکومت بنانے اور کابینہ کے قلمدان قبول کرنے میں ان کی مدد کریں۔

کولمبو: سری لنکا کے صدر گوٹابایا راجا پکشے کی قیادت والے اتحاد کو منگل کو ایک اور دھچکا لگا جب پارلیمنٹ کے ڈپٹی اسپیکر رنجیت سیامبل پٹیا سمیت 40 سے زیادہ ارکان پارلیمان نے مخلوط حکومت سے استعفیٰ دے دیا۔ سیامبل پتیا نے کہا کہ راجا پکشے کے سری لنکا پودوجانا پیرامونا (ایس ایل پی پی) کے زیرقیادت اتحاد کے ارکان پارلیمنٹ نے کہا کہ وہ اب آزاد نمائندوں کے طور پر پارلیمنٹ میں بیٹھیں گے۔

راجا پکشے اور ان کے بھائی وزیر اعظم مہندا راجا پکشے نے استعفیٰ دینے سے انکار کر دیا ہے، حالانکہ حکومت کی کابینہ پہلے ہی مستعفی ہو چکی ہے۔ صدر نے اپوزیشن جماعتوں سے اپیل کی ہے کہ وہ قومی حکومت بنانے اور کابینہ کے قلمدان قبول کرنے میں ان کی مدد کریں، لیکن ان سب نے انکار کر دیا اور ان (راجا پکشے) سے استعفیٰ دینے کے مطالبے کا اعادہ کیا۔ صدر کے استعفے کا مطالبہ کرتے ہوئے گزشتہ چند دنوں میں ملک بھر میں بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرے ہو رہے ہیں۔

ذریعہ
یواین آئی

تبصرہ کریں

Back to top button