بھگوان رام سے انصاف مانگنے ایک شخص ایودھیا پہونچا

70کلومیٹر پیدل چل کر بستی سے ایودھیا پہونچنے والے نشاد نے میڈیا نمائندوں کو بتایا کہ مقامی پولیس نے اس کے خلاف کئی جھوٹے فوجداری کیس درج کئے۔

ایودھیا: اترپردیش کے ضلع بستی کار رہنے والا سومناتھ نشاد ایک بینر پہن کر پلے کارڈ تھام کر ایودھیا پہونچ گیا ہے۔ وہ بھگوان رام سے فریاد کر رہا ہے کہ اسے ”پولیس ظلم“سے انصاف دلایا جائے۔

70کلومیٹر پیدل چل کر بستی سے ایودھیا پہونچنے والے نشاد نے میڈیا نمائندوں کو بتایا کہ مقامی پولیس نے اس کے خلاف کئی جھوٹے فوجداری کیس درج کئے۔ اس نے کہا کہ وہ مدد کیلئے ہر درپر دستک دے چکا ہے‘ انصاف ملنے کی کوئی امید نہ رہی‘ اسی لئے وہ بھگوان رام کے پاس چلا آیا ہے۔

اسے پورا بھروسہ ہے کہ اسے یہاں انصاف ملے گا۔ نشاد نے بتایا کہ مسئلہ اس وقت شروع ہوا جب جاریہ سال کے شروع میں گاؤں والوں سے اس کا معمولی جھگڑا ہوا۔ اس وقت کے سب انسپکر پولیس دیپک سنگھ نے حریف گروپ کی ایما پر اس کے خلاف کیس درج کردیا۔

اس پر غنڈہ ایکٹ لگا دیا گیا۔ اس نے تمام پولیس عہدیداروں سے فریاد کی لیکن کسی نے بھی اس کے کیس پر نظرثانی نہیں کی۔ سومناتھ نشاد کا الزام ہے کہ سب انسپکٹر نے اس سے 20ہزار روپئے مانگے۔

وہ یہ رقم دے نہیں سکا تو اسے جیل بھیج دیا گیا۔ سب انسپکٹر ویپک سنگھ کو ایک لڑکی اور اس کے 8ارکان خاندان کے خلاف جھوٹا کیس درج کرنے پر ملازمت سے برخواست کردیا گیا ہے۔ معاملہ میڈیا میں اچھلنے پر اس کے خلاف کارروائی کی گئی۔

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.