بی جے پی حکومت، اقلیتوں کو نشانہ بنارہی ہے : وزیراعظم پاکستان عمران خان

انہوں نے خبردار کیا کہ ایسا ایجنڈہ علاقائی امن کے لئے ”حقیقی اور موجودہ خطرہ“ ہے۔ عمران خان نے ہری دوار (اتراکھنڈ) دھرم سنسد (دسمبر 2021) میں مسلمانوں کے خلاف مبینہ اشتعال انگیز تقاریر کے پس منظر میں یہ الزام عائد کیا۔

اسلام آباد: وزیراعظم پاکستان عمران خان نے پیر کے دن الزام عائد کیا کہ ہندوستان میں انتہاپسند گروپس اقلیتوں کو نشانہ بنارہے ہیں۔

انہوں نے خبردار کیا کہ ایسا ایجنڈہ علاقائی امن کے لئے ”حقیقی اور موجودہ خطرہ“ ہے۔ عمران خان نے ہری دوار (اتراکھنڈ) دھرم سنسد (دسمبر 2021) میں مسلمانوں کے خلاف مبینہ اشتعال انگیز تقاریر کے پس منظر میں یہ الزام عائد کیا۔

انہوں نے اپنے ٹویٹر ہینڈل پر سوال کیا کہ آیا بی جے پی حکومت ہندوستان میں اقلیتوں خاص طورپر 20کروڑ مسلمانوں کی نسل کشی کے مطالبہ کی تائید کرتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ تقاضہ وقت ہے کہ بین الاقوامی برادری اس کا نوٹ لے اور حرکت میں آئے۔ ایک اور ٹویٹ میں عمران خان نے الزام عائد کیا کہ بی جے پی حکومت ہندوستان میں اقلیتوں کو نشانہ بنارہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ انتہاپسند ایجنڈہ ہمارے خطہ کے لئے حقیقی اور موجودہ خطرہ ہے۔ گزشتہ ماہ پاکستانی دفتر خارجہ نے ہندوستانی ناظم الامور کو طلب کرکے ہری دوار دھرم سنسد میں کی گئی نفرت انگیز تقاریر پر تشویش ظاہر کی تھی۔

17 تا 20 دسمبر ہری دوار دھرم سنسد کا اہتمام جونا اکھاڑہ کے یتی نرسمہانند گری نے کیا تھا جس کے خلاف پولیس تحقیقات جاری ہیں۔ دھرم سنسد میں بعض مقررین نے انتہائی اشتعال انگیز تقاریر کی تھیں اور کہا تھا کہ اقلیتی فرقہ کے لوگوں کو مار ڈالنا چاہئے۔

اس کیس میں 15 افراد بشمول وسیم رضوی کے خلاف 2 ایف آئی آر درج ہوچکی ہیں۔ وسیم رضوی حال میں اسلام چھوڑکر ہندو دھرم اختیار کرچکا ہے۔

اس نے اپنا نام جتیندر نارائن تیاگی رکھ لیا ہے۔ دھرم سنسد کا منتظم یتی نرسمہانند‘ غازی آباد کے ڈاسنہ مندر کا صدر پجاری ہے۔ معاملہ کی تحقیقات کے لئے 5 رکنی خصوصی تحقیقاتی ٹیم(ایس آئی ٹی) تشکیل دی جاچکی ہے۔

ہندوستانی سپریم کورٹ نے پیر کے دن مفادِ عامہ کی ایک درخواست (پی آئی ایل) کی سماعت پر آمادگی ظاہر کی جس میں دھرم سنسد میں نفرت پھیلانے والی تقاریر کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی گزارش کی گئی۔

جسٹس این وی رمنا کی بنچ نے سینئر وکیل کپل سبل کی اس بات کا نوٹ لیا کہ ایف آئی آر درج ہونے کے باوجود خاطیوں کے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہوئی ہے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.