تلنگانہ و اے پی میں شیر کی موجودگی، انسانی آبادیوں میں خوف

پہلے اے پی کے ضلع کرنول اور اب تلنگانہ کے ضلع بھدرادری کوتہ گوڑم میں شیر کی دہشت پائی جاتی ہے۔کرنول کے سری سیلم مہااکشتر حدودمیں حالیہ دنوں کے دوران ایک بڑا شیر نظرآیا۔

حیدرآباد: دونوں تلگو ریاستوں تلنگانہ اورآندھراپردیش میں شیر جنگل سے انسانی آبادیوں میں آرہے ہیں جس کے نتیجہ میں جنگلات سے متصل انسانی آبادیوں میں خوف کا ماحول پایاجاتا ہے۔

پہلے اے پی کے ضلع کرنول اور اب تلنگانہ کے ضلع بھدرادری کوتہ گوڑم میں شیر کی دہشت پائی جاتی ہے۔کرنول کے سری سیلم مہااکشتر حدودمیں حالیہ دنوں کے دوران ایک بڑا شیر نظرآیا۔مسلسل بارش کے سبب یہ شیر سڑک پر آگیا۔وہاں سے گذرنے والے ایک گاڑی سوار نے اس کی ویڈیو بنالی۔

اس ویڈیو میں دکھایاگیا ہے کہ یہ شیر،سڑک عبورکررہا ہے۔اس شیر کو سڑک عبورکرتاہوادیکھ کر دیگر گاڑی سواروں نے اپنی گاڑیوں کو روک دیا۔عہدیداروں نے مشورہ دیا ہے کہ رات کے وقت سفر کرنے والے چوکس رہیں۔

دوسری طرف تلنگانہ کے بھدرادری کوتہ گوڑم میں بھی شیر کے نظرآنے سے مقامی عوام میں ہلچل مچ گئی ہے۔ضلع کے ٹیکولاپلی، ایلندومنڈلوں میں یہ شیر نظرآیا۔ٹیکولاپلی منڈل مستقرمیں تقریبا 20کیلومیٹر کی دوری پر جنگل واقع ہے جہاں سے یہ شیر کھیتوں میں آگیا۔

کنٹلا، انجینیا پالم دیہاتوں میں کسانوں نے اس شیر کو دیکھا۔محکمہ جنگلات کے عہدیداروں نے مٹلاگوڑم، جنگالاپلی، سدھارا دیہاتوں کے حدود میں شیر کی موجودگی کا پتہ چلایا۔مقامی د یہاتوں میں رہنے والوں میں شیر کے امکانی حملہ کا خوف پایاجاتا ہے۔

ذریعہ
یو این آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.