سونیاگاندھی کے 71 سالہ پرسنل سکریٹری کے خلاف عصمت ریزی کا کیس درج

دہلی پولیس نے سینئر کانگریس قائد سونیاگاندھی کے پرسنل سکریٹری کے خلاف ایک خاتون کی عصمت ریزی اوراسے دھمکیاں دینے کے الزام میں ایک کیس درج کرلیاہے۔

نئی دہلی: دہلی پولیس نے سینئر کانگریس قائد سونیاگاندھی کے پرسنل سکریٹری کے خلاف ایک خاتون کی عصمت ریزی اوراسے دھمکیاں دینے کے الزام میں ایک کیس درج کرلیاہے۔

ملزم کی 71 سالہ پی پی مادھون کی حیثیت سے شناخت کی گئی ہے۔ پولیس نے بتایاکہ اس کیس میں ابھی تک کوئی گرفتاری نہیں کی گئی ہے۔ ڈی سی پی(دوارکا) ہرش وردھن نے کہاکہ ایک71 سالہ شخص کے خلاف الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ وہ ایک سینئر سیاسی قائد کے شخصی مددگارکی حیثیت سے کام کررہاہے۔

25جون کوایک شکایت موصول ہوئی تھی۔تعزیرات ہندکی دفعہ376(عصمت ریزی) اور506 (دھمکیاں دینا) کے تحت ایک کیس درج کرلیاگیاہے۔ ہم اس معاملہ کی تحقیقات کررہے ہیں۔ مادھون نے اخبار’انڈین ایکسپریس‘ کوبتایاکہ یہ ایک بے بنیاد الزام ہے جس کامقصد محض کانگریس کوبدنام کرنا ہے۔

اس میں کوئی سچائی نہیں ہے۔ یہ ایک مکمل سازش ہے۔ پولیس کے مطابق خاتون نے مادھون پرالزام لگایاہے کہ انہوں نے اسے ملازمت دینے اورشادی کرنے کے بہانے کئی مرتبہ اس کی عصمت ریزی کی ہے اوراسے ہراساں کیاہے۔ خاتون نے کہاکہ2020میں شوہر کی موت کے بعد اس کی مادھون سے ملاقات ہوئی۔

اس کا شوہر پارٹی آفس میں ہیلپر کا کام کرتاتھا۔ وہ بھی اکثرکام کی تلاش میں کانگریس کے دفتر جایاکرتی تھی۔ اس نے بتایاکہ ”میری مالی حالت اچھی نہیں تھی اورمیں کانگریس کے دفتر گئی جہاں مجھے سونیاگاندھی کے شخصی مددگارپی پی مادھون کافون نمبر ملا۔ میں نے انہیں بتایاکہ مجھے کام کی ضرورت ہے اورانہوں نے میری مددکرنے کاوعدہ کیا۔

جاریہ سال21۔ جنوری کوانہوں نے مجھے انٹرویوکیلئے بلایا۔ انہوں نے مجھ سے کئی سوالات کئے اورمیرے دستاویزات دیکھے۔ بعدازاں انہوں نے کہاکہ وہ مجھ سے شادی کرناچاہتے ہیں۔ میں نے ہاں کردی۔ ایک دن انہوں نے مجھے ملاقات کیلئے بلایا۔ وہ مجھے لینے کیلئے کارمیں آئے تھے۔ انہوں نے اپنے ڈرائیورکوچلے جانے کی ہدایت دی۔

انہوں نے مجھ پرجنسی حملہ کیااورعصمت ریزی کی کوشش کی۔جب میں نے اس پر اعتراض کیاتو وہ برہم ہوگئے اورمجھے سڑک پر تنہا چھوڑ دیا۔“ شکایت گزار نے کہاکہ ملزم نے بعدمیں اس سے معافی مانگ لی اوروہ دونوں ایک بارپھر بات چیت کرنے لگے۔ چند دن بعد انہوں نے ایک بارپھر مجھے ملاقات کیلئے بلایا۔ ایف آئی آرمیں الزام عائد کیاگیاکہ فروری میں انہوں نے مجھے ملاقات کیلئے بلایا اورمیری عصمت ریزی کی۔

بعدازاں انہوں نے مجھ سے کہاکہ ان کی بیوی نے میرا موبائیل نمبر دیکھ لیاہے۔ میں یہ سن کر حیرت زدہ رہ گئی۔ بعدازاں انہوں نے مجھے کسی اورکے ساتھ تعلقات قائم کرنے کیلئے کہالیکن میں نے انکارکردیا۔ انہوں نے مجھے دھمکیاں دیں اورکہاکہ مجھے اغوا کرادیں گے۔ میں بے حد خوفزدہ ہوگئی تھی۔

تبصرہ کریں

Back to top button