سپریم کورٹ کا ہیرا گروپ آف کمپنیز کے حق میں فیصلہ،کاروبار چلانے کی اجازت: نوہیرا شیخ

حیدرآباد۔: سی ای او ہیرا گروپ آف کمپنیز ڈاکٹر نوہیرا شیخ نے کہا کہ تین سال کی جدوجہد اور آزمائش کے بعد انہیں سپریم کورٹ میں کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ آج یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ چند عناصر کی جانب سے انہیں ہراساں کیا گیا۔ کاروبار کو متاثر کرنے کی بھرپور کوشش کی گئی‘ انہیں بدنام کیا گیا‘ جیل بھیج دیا گیا لیکن انصاف کے لئے ”دیر ہے اندھیر نہیں“ کے مصداق ملک کی اعلیٰ ترین عدالت میں انہیں کامیابی حاصل ہوئی۔

ان کے خلاف کچھ غلط ثابت نہیں کیا جاسکا۔ نوہیرا شیخ نے کہا کہ شروع ہی سے ان کا کاروبار شفافیت پر مبنی رہا۔ اسی لئے انہیں سیشن کورٹ‘ ہائی کورٹ اور اب سپریم کورٹ میں کامیابی حاصل ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے مطابق جو سرمایہ کار گروپ سے نکلنا چاہتے ہیں ان کے بقایاجات ادا کردیئے جانے چاہئے اور 87 جائیدادوں کی نشاندہی کرتے ہوئے بقایاجات کی ادائیگی کے لئے فروخت کرنے کی اجازت دی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اب تک صرف 29 حقیقی سرمایہ کار گروپ سے الگ ہونے کی خواہش کی ہے اور شرائط کے مطابق ان کے بقایاجات ادا کردیئے جائیں گے۔ نوہیرا شیخ نے کہا کہ سپریم کورٹ نے تمام معاملات کی یکسوئی کے لئے SFIO کو ذمہ داری تصدیق کی ہے اور اگر کسی سرمایہ دار کو کسی مسئلہ پر وضاحت مانگی ہویا سرمایہ واپس لینا ہوتو وہ اپنی جملہ تفصیلات کے ساتھ SFIO سے رجوع ہوسکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سپریم کورٹ نے سی سی ایس پولیس کو ہیرا گروپ کا ڈاٹا واپس کرنے کی بھی ہدایت دی ہے۔ اس کے علاوہ اپنے کاروبار کو جاری کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔

بینکوں کو بھی ہیرا گروپ کے 249 اکاؤنٹس کو دوبارہ کارکرد بنانے کی ہدایت دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہیرا گروپ اپنا کاروبار جاری رکھے گا اور جو شراکت دار ہمارے کاروبار سے جڑے رہنا چاہتے ہیں۔ ان کو ساتھ رکھا جائے گا اور جو چھوڑنا چاہتے ہیں ان کا حساب کردیا جائے گا۔ انہوں نے مخالفین گروپ کو مشورہ دیا کہ اپنی ناکامی کے بعد وہ اندھی مخالفت ترک کریں۔ گروپ جس سے لاکھوں افراد وابستہ ہیں‘ ان کے مستقبل سے کھلواڑ نہ کریں۔ انہوں نے واضح کیا کہ وہ ملک بھر میں انتخابات میں حصہ لیں گی اور انتخابات میں حصہ لینا ان کا جمہوری حق ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button