شنڈے کو 20مئی کو چیف منسٹری آفرکی گئی تھی: آدتیہ ٹھاکرے

آدتیہ ٹھاکرے نے کہا کہ گوہاٹی کے فائیواسٹارہوٹل میں ارکان اسمبلی کے جس گروپ نے پڑاؤ ڈال رکھا ہے وہ غداروں کا گروپ ہے جسے شیوسینا میں واپس نہیں لیاجائے گا۔

ممبئی: بڑے انکشاف میں مہاراشٹرا کے وزیر آدتیہ ٹھاکرے نے اتوار کے دن دعویٰ کیاکہ مہاوکاس اگھاڑی کے چیف منسٹر ادھوٹھاکرے نے 20مئی کو اپنے کابینی ساتھ ایکناتھ شنڈے کو چیف منسٹری کا عہدہ پلیٹ میں رکھ کر پیش کیاتھا، تاہم اس وقت شنڈے کو بڑا پس وپیش تھا۔

 انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔ جونئیرٹھاکرے نے کہا کہ میں نے اس وقت سناتھا کہ کچھ ایسا ویسا چل رہاہے۔ ٹھیک ایک ماہ بعد 20جون شنڈے اور ان کے گروپ نے پارٹی میں بغاوت شروع کردی۔ آدتیہ ٹھاکرے نے کہا کہ اچھا ہوا پارٹی سے ساری گندگی ازخودچلی گئی۔ اب سب کچھ صاف ستھرا ہے۔

آدتیہ ٹھاکرے نے کہا کہ گوہاٹی کے فائیواسٹارہوٹل میں ارکان اسمبلی کے جس گروپ نے پڑاؤ ڈال رکھا ہے وہ غداروں کا گروپ ہے جسے شیوسینا میں واپس نہیں لیاجائے گا۔

انہوں نے اپنے والد ادھوٹھاکرے کا بیان دہرایاکہ پارٹی کے دروازے ہمیشہ ان لوگوں کیلئے کھلے ہیں جو جاناچاہتے ہیں یا واپس آناچاہتے ہیں۔ آدتیہ ٹھاکرے کا یہ بیان اہمیت کا حامل ہے کیونکہ خبرآئی تھی کہ باغیوں کا یہ گروپ اب یہ چاہتا ہے کہ ایکناتھ شنڈے کو چیف منسٹر بنایاجائے۔

 باغیوں کو درپردہ وارننگ دیتے ہوئے ٹھاکرجونیئر نے کہا کہ ممبئی ایرپورٹ (سانتاکروز) سے ریاستی اسمبلی (نریمان پوائنٹ) جانے والا راستہ ورلی سے ہوکر گذرتا ہے‘ ورلی جنوب وسطی ممبئی میں شیوسینا کا گڑھ ہے۔ یہ وہ حلقہ بھی ہے جہاں سے آدتیہ ٹھاکرے 2019ء میں پہلی مرتبہ رکن اسمبلی منتخب ہوئے۔

تبصرہ کریں

Back to top button