عوام کو سماجی تحفظ مہیا کرنے کے لیے قانون سازی کریں  : اشوک گہلوٹ

انہوں نے کہا کہ مشینوں کی اہمیت ہے ، مگر مزدور بہت اہم ہیں اور یہ حکومت کی ذمہ داری ہے کہ ان کی نگہداشت کرے ۔ ان کے لیے اس وقت مسائل پیدا ہوتے ہیں جب وہ ضعیف ہوجاتے ہیں اور کام نہیں کرسکتے ۔ اس وقت انہیں سیکوریٹی مہیا کرنے میں حکومت کا رول نہایت اہم ہوجاتا ہے ۔

جئے پور ۔ راجستھان کے چیف منسٹر اشوک گہلوٹ نے مرکز سے ملک کے عوام کو سماجی تحفظ مہیا کرنے کے لیے قانون سازی کرنے کی خواہش کی ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ منموہن سنگھ کی زیرقیادت یوپی اے حکومت کا دور عوام کو حقوق فراہم کرنے کا دور تھا ۔ حق تعلیم ، حق اطلاعات ، منریگا اور غذائی تحفظ ایکٹ وضع کیے گئے تھے ۔

انہوں نے پی ٹی آئی سے کہا کہ ملک کے عوام کو سماجی تحفظ کا حق ہونا چاہیے ۔ مرکز کو عوام کو سماجی تحفظ فراہم کرنے کے لیے قانون وضع کرنا چاہیے ، چاہے وہ مصیبت زدہ ہوں یا تنہا خواتین ، ضعیف افراد یا مزدور ہوں ۔

انہوں نے کہا کہ مشینوں کی اہمیت ہے ، مگر مزدور بہت اہم ہیں اور یہ حکومت کی ذمہ داری ہے کہ ان کی نگہداشت کرے ۔ ان کے لیے اس وقت مسائل پیدا ہوتے ہیں جب وہ ضعیف ہوجاتے ہیں اور کام نہیں کرسکتے ۔ اس وقت انہیں سیکوریٹی مہیا کرنے میں حکومت کا رول نہایت اہم ہوجاتا ہے ۔

چیف منسٹر نے دعویٰ کیا کہ ان کی حکومت نے کئی پہل کیے ، جن میں ریاستی ملازمین کے لیے قدیم پنشن اسکیم کا احیاء ، ان کے لیے ریاستی حکومت کے تمام دوا خانوں میں آئی پی ڈی اور او پی ڈی میں مفت علاج اور سی ایم چرنجیوی ہیلتھ انشورنس اسکیم کے تحت فی خاندان رقم پانچ لاکھ سے بڑھاکر دس لاکھ روپئے کرنا شامل ہے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button