ملک کا پہلا 22 منزلہ سرکاری اسپتال ورنگل میں تعمیر ہوگا: ای دیاکرراؤ

ای دیاکرراؤ نے کہا کہ جلد ہی ایم جی ایم اسپتال میں 60سال سے زائد عمر کے افراد کے لئے گھٹنوں کی تبدیلی کی سرجری کی جائے گی۔ ملک کا پہلا 22منزلہ اسپتال ورنگل میں تعمیر کیاجارہا ہے۔

حیدرآباد: تلنگانہ کے وزیر پنچایت راج ای دیاکرراو نے کہا ہے کہ ضلع ورنگل کے ایم جی ایم اسپتال کو ملک کے بڑے طبی مراکز میں سے ایک بنایاجائے گا۔انہوں نے آج اس اسپتال میں کیژولٹی شعبہ میں تین کروڑروپئے کے صرفہ سے خریدی گئی سی ٹی اسکین مشین کاافتتاح انجام دیا۔

اس موقع پر انہوں نے اعلی عہدیداروں اور اسپتال کے اسٹاف کے ساتھ اسپتال کے مختلف شعبہ جات کا معائنہ کیا اورمریضوں کوفراہم کی جانے والی طبی سہولیات کے بارے میں معلومات حاصل کیں۔انہوں نے مریضوں سے بھی ملاقات کی اور ان کے مسائل کے ساتھ ساتھ اس اسپتال کی طبی خدمات کے بارے میں استفسارات کئے۔

وزیرموصوف نے اسپتال کے مسائل اور بنیادی سہولیات کے بارے میں عہدیداروں سے تبادلہ خیال بھی کیا۔انہوں نے نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ علاج کے لئے اس صحت کے مرکز سے رجوع ہونے والے غریبوں کی جان بچانے اوران کے بہتر علاج کے لئے حکومت مساعی کررہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ریاست کے سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کو کارپوریٹ سطح کے علاج کی سہولتیں فراہم کی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جلد ہی ایم جی ایم اسپتال میں 60سال سے زائد عمر کے افراد کے لئے گھٹنوں کی تبدیلی کی سرجری کی جائے گی۔ ملک کا پہلا 22منزلہ اسپتال ورنگل میں تعمیر کیاجارہا ہے۔

اس اسپتال میں ہر طرح کے علاج کی سہولت کو یقینی بنایاجائے گا۔انہوں نے کہاکہ غریبوں کو ایک روپیہ بھی خرچ کئے بغیر نئے اسپتال میں علاج کی سہولت فراہم کرنے کا منصوبہ تیار کیاجارہا ہے کیونکہ پرائیویٹ اسپتالوں میں علاج کی سہولت سے استفادہ کرنے والے غریبوں کی معاشی حالت کافی خراب ہوتی ہے۔ ایسے اسپتالوں میں علاج کروانے والوں کا کہنا ہوتا ہے کہ جان بچانے کے لئے ان کی رقم صرف ہوتی ہے اور اثاثہ جات بھی فروخت ہوجاتے ہیں۔

تبصرہ کریں

Back to top button