مودی حکومت کسی بھی بھید بھاؤ اور تعصب کے بغیر کارکرد: نقوی

اس کا اعلان آج یہاں پنویل میں واقرانجمن اسلام کالسیکر آئی ٹی کمپلکس میں سول سروس تربیتی پروگرام کی افتتاحی تقریب میں کیا۔مرکزی وزیراور راجیہ سبھا میں ڈپٹی لیڈر نقوی نے مزید کہا وزیراعظم نریندر مودی کے دور میں کسی بھی تعصب کے بغیر سبھی کو ہر ایک شعبہ حیات میں سہولیات فراہم کی جارہی ہیں۔

ممبئی: انجمن اسلام میں جلدمزید تعلیمی سہولیات کا اعلان ہوگااور طلباء وطالبات کو بہتر سے بہتر مواقع فراہم کرنے کیے اقلیتی امور کی وزارت کے تحت بہت سے منصوبوں کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے۔

اس کا اعلان آج یہاں پنویل میں واقرانجمن اسلام کالسیکر آئی ٹی کمپلکس میں سول سروس تربیتی پروگرام کی افتتاحی تقریب میں کیا۔مرکزی وزیراور راجیہ سبھا میں ڈپٹی لیڈر نقوی نے مزید کہا وزیراعظم نریندر مودی کے دور میں کسی بھی تعصب کے بغیر سبھی کو ہر ایک شعبہ حیات میں سہولیات فراہم کی جارہی ہیں۔

کیونکہ نریندر مودی نے ذات پات برادری سے بالاتر ایک عوامی لیڈر کی حیثیت حاصل کرلی ہے،یہی وجہ ہے کہ ان کا باوقار مشترکہ خودمختاری کا عزم کامیاب ہوتا ہے۔انہوں نے متاثرسیاسی ثقافت کی زنجیر کوتوڑ کرعام افراد کو”ترقی،بھائی چارگی کا سچا ساتھی بنادیا ہے۔”مختار عباس نقوی نے کہا کہ گزشتہ آٹھ سال سے مودی حکومت نے معاشرے کے تمام طبقات کی معاشرتی‘ اقتصادی‘تعلیمی خودمختاری کے لیے بلارکے بناتھکے انتھک مشقت محنت کو نتائج میں تبدیل کرکے ترقی کو اعتماد میں۔ تبدل کردیا ہے۔

اقلیتی معاشرہ جس کا سیاسی استحصال تویوتا رہا ہے،لیکن خودمختاری نہیں حاصل ہوئی۔نقوی نے کہاکہ آٹھ سال قبل 2014 تک صرف تین کروڑ اقلیتی طلبائکو اسکالرشپ دی گئی تھی،وہیں گزشتہ 8برسوں میں پانچ کروڑ بیس لاکھ اقلیتی طلباء وطالبات کو اسکالر شپ دی گئی ہے،یہی سبب ہے کہ مسلم طالبات کی ڈراپ آؤٹ کی شرح 70فیصد سے گھٹ کر تیس فیصد رہ گئی ہے اور اسے مزید کم کیا جائیگا۔نقوی نے کہا کہ 2014 سے پہلے بیس ہزار اقلیتوں کواسکل ڈولیپمنٹ ٹریننگ اور روزگار فراہم کیاگیا تھا-

وہیں پچھلے آٹھ برسوں میں مودی سرکار کے ذریعہ روزگار پر مبنی مختلف پروگرام مثلاً ہنرہاٹ،سیکھواور کماو،نئی منزل،نئی روشنی،استاد،غریب نواز ذاتی روزگار اسکیم وغیرہ کے ذریعہ اکیس لاکھ پچاس ہزار اقلیتی طبقے کے افراد کوشل عکاس کی تربیت،روزگار اور روزگار کے مواقع فراہم کرائے گئے ہیں۔ان۔میں محروم،پسماندہ طبقات اور خواتین کو بڑے پیمانے پر فائدہ ہواہے۔ انہوں نے دعویٰ کیاکہ آج نوجوان بڑی تعداد میں سول سروسز اور مسابقتی امتحانات میں منتخب کیے جارہے ہیں۔

مودی حکومت نے قابلیت کی قدر کی ہے۔کیونکہ 3014 میں جہاں مرکزی حکومت کی ملازمتوں میں اقلیتوں کی شرکت پانچ فیصد سے بھی کم تھی،وہ اب بڑھ کر دس فیصد سے بھی زیادہ ہوگئی ہے۔مختار عباس نقوی نے کہاکہ سابقہ دور میں صرف 90 فیصد اقلیتی اکثریت والے اضلاع کو ترقی کے کاموں کے لیے نشان زدہ کیاگیاتھا،لیکن اب پردھان منتری عکاس جارہی کرم کا دائرہ ملک کے تمام اضلاع تک وسیع کردیا ہے۔

پچھلے آٹھ برس میں اٹھارہ ہزار کروڑ روپئے سے زیادہ لاگت سے پسماندہ علاقوں میں اسکول،کالج آئی ٹی آئی،اسمارٹ کلاس روم،کامن سروس سینٹر، اسکل ڈیویلپمنٹ سینٹر،ہاسٹل،اسپتال، پینے کے پانی سے متعلق صحت کی سہولیات،کھیل کی سہولیات،سدبھاومنڈپ،ہنر ہب وغیرہ کی تعمیر کی گئی ہے۔ نقوی نے کہاکہ انجمن اسلام میں جلدمزید تعلیمی سہولیات کا اعلان ہوگا،اور  وہ ایک بہتر تعلیمی سلسلہ شروع ہوجائیگا۔

اس شے قبل انجمن اسلام صدرڈاکٹر ظہیر قاضی نے مرکزی وزیر نقوی کا اس بات کے لیے شکریہ اداکیا کہ مرکزی حکومت کی طرف سے ہمیشہ کسی بھی تعلیمی پروگرام کے لیے انجمن اسلام کوہی ترجیح دی جاتی ہے اور سول سروسز کے لیے بھی انجمن کانتخاب کیا گیا ہے اور جلد ہی گروگرام میں بنائے جانے والے کمپلکس میں انجمن کو شامل کیاجائے گا،اس موقع پر نئے ممبران کا استقبال اور بہترین کاکردگی کا مظاہرہ کرنے والے طلبہ کا اعزاز کیاگیا۔ انجمن اسلام پنویل کے ڈائرکٹر عبد الرزاق ہنوڈگری نے مہمانوں کا استقبال کیا جبکہ برہان حارث ایکزیکٹیو چیئرمین نے شکریہ اداکیا۔

ذریعہ
یو این آئی

تبصرہ کریں

Back to top button