مہاراشٹرا مجالس مقامی الیکشن، 27 فیصد او بی سی نشستیں عام زمرہ میں تبدیل

6 دسمبر کو سپریم کورٹ نے 27 فیصد او بی سی ریزرویشن دینے کے حکومت ِ مہاراشٹرا کے فیصلہ پرتاحکم ثانی روک لگادی تھی۔ یہ ریزرویشن مجالس مقامی انتخابات کے لئے دیا گیا تھا۔

نئی دہلی: حکومت ِ مہاراشٹرا کو ایک اور دھکا پہنچا ہے۔ سپریم کورٹ نے چہارشنبہ کے دن ریاستی الیکشن کمیشن (ایس ای سی) اور ریاستی حکومت کو حکم دیا کہ وہ ضلع پریشد اور پنچایت سمیتی میں دیگر پسماندہ طبقات(او بی سی) کے لئے محفوظ 27 فیصد نشستوں کو عام زمرہ (اوپن کیٹگری) میں تبدیل کردیں اور نیا اعلامیہ جاری کریں۔

6 دسمبر کو سپریم کورٹ نے 27 فیصد او بی سی ریزرویشن دینے کے حکومت ِ مہاراشٹرا کے فیصلہ پرتاحکم ثانی روک لگادی تھی۔ یہ ریزرویشن مجالس مقامی انتخابات کے لئے دیا گیا تھا۔

جسٹس اے ایم کھنولکر کی بنچ نے ریاستی الیکشن کمیشن کو ہدایت دی کہ وہ او بی سی نشستوں کو عام زمرہ میں بدل کر پھر سے اعلامیہ جاری کرے تاکہ ان نشستوں پر الیکشن مابقی73 فیصد نشستوں کے ساتھ ہو۔

سپریم کورٹ نے معاملہ کی مزید سماعت جنوری کے تیسرے ہفتہ میں مقرر کی۔ اس نے حکومت ِ مہاراشٹرا اور بعض دیگر افراد کی گزارش نہیں مانی جو 6 دسمبر کے احکام میں ترمیم چاہتے تھے۔

6 دسمبر کو سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ 27 فیصد او بی سی ریزرویشن‘ کمیشن قائم کرے بغیر نہیں دیا جاسکتا۔

تبصرہ کریں

Back to top button