میرا اندیشہ درست ثابت ہوا:اسد الدین اویسی

گیان واپی مسجد سے ایک شیو لِنگ برآمد ہونے کے ہندو فریق کے دعویٰ کے بیچ مجلسی قائد اور حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے عدالت کے حکم پر تنقید کی جس میں شیو لنگ برآمد ہونے کے مقام کو مہربند کردینے کی ہدایت دی گئی ہے۔

نئی دہلی: گیان واپی مسجد سے ایک شیو لِنگ برآمد ہونے کے ہندو فریق کے دعویٰ کے بیچ مجلسی قائد اور حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے عدالت کے حکم پر تنقید کی جس میں شیو لنگ برآمد ہونے کے مقام کو مہربند کردینے کی ہدایت دی گئی ہے۔

مجلسی قائد نے ٹویٹ کیا کہ یہ دسمبر 1949 میں بابری مسجد میں جو ہوا اسے دُہرانے کا معاملہ ہے۔ عدالتی حکم‘ مسجد کی مذہبی نوعیت کو ہی بدل دیتا ہے۔ یہ 1991کے قانون کی خلاف ورزی ہے۔

اس تعلق سے میں نے اندیشہ ظاہر کیا جو درست ثابت ہوا۔ گیان واپی مسجد تھی اور روزِ محشر تک مسجد ہی رہے گی انشاء اللہ۔ انہوں نے کہا کہ 1949میں بابری مسجد کے اندر مورتیاں رکھ دی گئی تھیں لیکن عدالت نے زمین رام مندر کو دے دی جس کی تعمیر تیزی سے جاری ہے۔

پیر کے دن ہندو فریق کے وکلاء نے دعویٰ کیا کہ باؤلی کے اندر شیو لنگ پایا گیا۔ وکیل وشنو جین نے کہا کہ وہ اس کے تحفظ کے لئے دیوانی عدالت(سیول کورٹ) جائیں گے۔ ہندو فریق کے ایک وکیل مدن موہن یادو نے دعویٰ کیا کہ یہ شیو لنگ نندی کے چہرہ جیسا ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button