ناراض عہدیداروں کو کٹہرے میں ٹھہرانے کی ضرورت: سپریم کورٹ

سپریم کورٹ نے جمعہ کے دن کہا کہ حکومت ِگجرات کے ناراض عہدیداروں کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کی ضرورت ہے۔

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے جمعہ کے دن کہا کہ حکومت ِگجرات کے ناراض عہدیداروں کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کی ضرورت ہے۔

ان کے خلاف قانونی کارروائی ہونی چاہئے کیونکہ ان لوگوں نے 2002 کے فسادات کے تعلق سے جھوٹے انکشافات کئے تھے۔

عدالت نے اس سلسلہ میں سنجیو بھٹ (اُس وقت کے آئی پی ایس عہدیدار)‘ ہرین پانڈیا (اُس وقت کے وزیر داخلہ گجرات) اور آر بی سری کمار (ریٹائرڈ آئی پی ایس عہدیدار) کا نام لیا اور کہا کہ ان لوگوں نے معاملوں کو سنسنی خیز بنایا اور سیاسی رنگ دیا۔

ہرین پانڈیا کو صبح چہل قدمی کے دوران احمدآباد میں لا گارڈن کے قریب 26 مارچ 2003کو گولی مارکر ہلاک کردیا گیا تھا۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ سنجیو بھٹ اور ہرین پانڈیا نے خود کو اُس میٹنگ کے عینی شاہد ہونے کا جھوٹا دعویٰ کیا جس میں چیف منسٹر کے خلاف کچھ کہا گیا تھا۔ خصوصی تحقیقاتی ٹیم(ایس آئی ٹی) نے ان کے دعوؤں کو جھوٹا ثابت کیا۔

تبصرہ کریں

Back to top button