ٹینک بنڈ پر نیا آب بند پل تعمیر کرنے جی ایچ ایم سی کا منصوبہ

کارپوریشن نے یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ حسین ساگر جھیل کے موجودہ آب بند دروازوں کو دیڑھ میٹر بڑھاکر 11 فلڈ گیٹس تعمیر کئے جائیں جس کی تخمینی لاگت 41 کروڑ روپے ہوگی۔

حیدرآباد: گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن (جی ایچ ایم سی) نے ٹینک بنڈ کے قریب مریاٹ ہوٹل کے آگے 25 کروڑ روپے کی لاگت سے ایک 6 خطی پل تعمیر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

کارپوریشن نے یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ حسین ساگر جھیل کے موجودہ آب بند دروازوں کو دیڑھ میٹر بڑھاکر 11 فلڈ گیٹس تعمیر کئے جائیں جس کی تخمینی لاگت 41 کروڑ روپے ہوگی۔ یہ114 میٹر طویل پل ٹینک بنڈ کمان کی پٹی پر اکسٹینشن ہوگا جو سکندرآباد کو حیدرآباد سے جوڑتا ہے‘ اس پر گاڑیوں کو داخل اور باہر نکلنے کی سہولت نہیں ہوگی۔

اسٹراٹیجک روڈ ڈیولپمنٹ پلان (ایس این ڈی پی) کے عہدیداروں کے مطابق فلڈ گیٹس مجوزہ پل کے نیچے تعمیر کئے جائیں گے تاکہ حسین ساگر کے زیریں علاقوں کو زیر آب آنے سے بچانے کیلئے جھیل کے فاضل پانی کو خارج کیا جاسکے۔ حسین ساگر کے پانی کے اخراج کیلئے پہلے ہی سے 11 آب بند اور نالے ہیں۔

جن کے ذریعہ فاضل پانی خارج کیا جاتا ہے۔ عہدیداروں نے کہا کہ 6 خطی اکسٹینشن 11 آبی دروازوں کی ضرورت کو پورا کرے گا جو بہت جلد فلڈ گیٹس پر تبدیل ہوجائیں گے۔ عہدیداروں نے کہا کہ جب جھیل میں پانی جھیل کی اعظم ترین سطح 513.41 میٹر اور پانی کی اعظم ترین سطح 514.75 میٹرس پر پانی پہنچ جائے گا تو ان فلڈ گیٹس کے ذریعہ اخراج عمل میں آئے گا۔

پل کی تعمیر اور آب بند دروازوں کی فلڈ گیٹس میں تبدیلی کے بعد حسین ساگر میں فاضل پانی حکام کے مکمل کنٹرول میں ہوگا اور اس سے زیریں علاقوں کو زیر آب آنے سے بچایا جاسکے گا۔ دریں اثناء 2021-22 کیلئے مختصر مدتی منصوبہ کے تحت محکمہ بلدی نظم و نسق و شہری ترقی 855 کروڑ روپے کے کاموں کی انتظامی منظوری دے گا ان کاموں میں پلوں کی تعمیر‘ نالوں کی کشادگی‘ ری ماڈلنگ اور جھیلوں وغیرہ کا ایس این ڈی پی کے تحت فروغ شامل ہوگا۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button