پاکستان کو 8بلین ڈالر کی سعودی امداد

پاکستان کو بڑھتے معاشی چیالنجس کا سامنا ہے۔ مہنگائی بڑھتی جارہی ہے اور بیرونی زرمبادلہ ذخائر گھٹتے جارہے ہیں۔ کرنسی کی قدربھی گھٹ رہی ہے۔ پاکستان نے اپنے وزیراعظم شہبازشریف کے دورہ سعودی عرب میں یہ پیاکیج حاصل کیا۔

اسلام آباد: سعودی عرب نے مالیہ کی قلت سے دوچار پاکستان کو لگ بھگ 8بلین امریکی ڈالر کا قابل لحاظ پیاکیج دینے پر آمادگی ظاہرکی ہے تاکہ اس کے گھٹتے بیرونی زرمبادلہ ذخائر میں اضافہ ہو اور وہ اپنی کمزورمعیشت کا احیاء کرسکے۔

پاکستان کو بڑھتے معاشی چیالنجس کا سامنا ہے۔ مہنگائی بڑھتی جارہی ہے اور بیرونی زرمبادلہ ذخائر گھٹتے جارہے ہیں۔ کرنسی کی قدربھی گھٹ رہی ہے۔ پاکستان نے اپنے وزیراعظم شہبازشریف کے دورہ سعودی عرب میں یہ پیاکیج حاصل کیا۔

مالی پیاکیج میں ادھارپر دئیے جانے والے تیل کی مقدار میں دگنا اضافہ شامل ہے۔ تکنیکی تفصیلات پر کام ہورہا ہے اور کاغذات تیارہونے میں دو ہفتے لگیں گے۔ اخباردی نیوز نے یہ اطلاع دی۔

وزیراعظم شہبازشریف اور ان کا قافلہ سعودی عرب سے روانہ ہوگیا لیکن وزیرفینانس مفتاح اسماعیل ابھی بھی مملکت میں موجود ہیں۔ وہ مالیاتی پیاکیج کے طریقہ کار کوقطعیت دے رہے ہیں۔

شہبازشریف متحدہ عرب امارات کے ولیعہدمحمدبن زید سے ملاقات کیلئے ابوظبی میں توقف کے بعد پاکستان لوٹ جائیں گے۔ پاکستان نے سعودی عرب سے کہاتھا کہ وہ ادھار پر تیل کی مقدار دگنی کردے یعنی اسے 1.2 بلین امریکی ڈالر کے بجائے 2.4بلین امریکی ڈالر کا تیل دیاجائے۔

سعودی عرب نے اس پر آمادگی ظاہرکی۔ یہ بھی طئے پایاکہ 3بلین امریکی ڈالر کے موجودہ ڈپازٹ کو جون 2023 تک بڑھادیاجائے گا۔ سعودی عرب نے گذشتہ برس دسمبر میں پاکستان کے اسٹیٹ بینک کو 3بلین امریکی ڈالر کی ڈپازٹ دی تھی۔ اس نے مارچ 2020ء سے ادھارپر تیل دینابھی شروع کردیا۔

اس نے تیل کی خریداری کیلئے پاکستان کو 100ملین امریکی ڈالر دئیے۔ پاکستان مسلم لیگ نواز کی پچھلی حکومت2013-18 کے دوران سعودی عرب نے پاکستان کو 7.5 بلین امریکی ڈالر کا مالیاتی پیاکیج دیاتھا۔ عمران خان کی حکومت میں سعودی عرب نے پاکستان کو4.2بلین امریکی ڈالرکا پیاکیج دیاتھا۔

تبصرہ کریں

Back to top button