کانگریس ہندو مذہب کے مسائل کو نظر انداز کررہی ہے: ہاردک پٹیل

ہاردک نے کہا کہ انہوں نے کانگریس میں رہ کر اپنی زندگی کے تین سال ضائع کردیئے۔ یہ پارٹی گجرات کے لوگوں کو کس طرح ناخوش کیاجائے، اسی کے لئے کام کرتی ہے۔

احمد آباد: کانگریس سے حال ہی میں استعفیٰ دینے والے پاٹیدار ریزرویشن تحریک کے لیڈر ہاردک پٹیل نے آج ایک بار پھر اہم اپوزیشن پارٹی اور اس کے لیڈروں پر سخت حملہ کرتے ہوئے کہا کہ فی الحال انہوں نے بی جے پی یا عام آدمی میں شامل ہونے کے بارے میں کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے اوراس حوالے سے وہ جب بھی فیصلہ کریں گے ایمانداری اور فخرکے ساتھ کریں گے۔

پٹیل نے پنجاب کے چنڈی گڑھ سے اپنے استعفیٰ کا اعلان کرنے کے ایک دن بعد آج یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ انہیں کانگریس پراس لئے غصہ آتا ہے کیونکہ پارٹی بار بار مذہب (ہندو) سے متعلق مسائل کو نظر انداز کرتی ہے۔ انہوں نے رام مندر کے لیے اینٹ بھیجنے، مندروں کو توڑ کر ان پر مسجدیں بنانے (گیانواپی واقعہ کے تناظر میں) اور شہریت ترمیمی قانون جیسے حکمراں پارٹی کے اہم مدوں کی حمایت بھی کی۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کانگریس کے زیادہ تر بڑے لیڈر ذاتی فائدے کے لیے پارٹی کا استعمال کر رہے ہیں۔ انہوں نے گجرات سے متعلق مسائل کوراہول اور پرینکا گاندھی جیسے سینئر لیڈروں کو بھی بتایا لیکن انہوں نے بھی ان میں کوئی دلچسپی نہیں لی۔ دو سال سے پارٹی کی گجرات یونٹ کا ورکنگ صدر بنائے جانے کے باوجود پارٹی نے انہیں کوئی ذمہ داری ہی نہیں دی۔

 پارٹی کے لیڈر اب چاہتے ہی نہیں کہ وہ اس میں رہیں۔ کانگریس کے کام کرنے کے انداز پر سوال اٹھانے اور سچ بولنے پر پارٹی ایسا کرنے والے کوہی بدنام کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ ان کے کہنے پر پارٹی نے کبھی کسی کو ٹکٹ نہیں دیا۔ ہاردک نے کہا کہ انہوں نے کانگریس میں رہ کر اپنی زندگی کے تین سال ضائع کردیئے۔ یہ پارٹی گجرات کے لوگوں کو کس طرح ناخوش کیاجائے، اسی کے لئے کام کرتی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button