کرناٹک کے بی جے پی ایم ایل اے کیخلاف اغوا کا مقدمہ درج

شکایت کنندہ نے الزام لگایا کہ پاٹل نے کارپوریشن کی ایک رکن شہناز بیگم کو رائےچور کارپوریشن کے صدارتی انتخابات میں ووٹ دینے سے روکنے کے لیے اغوا کیا۔

پڈوچیری: پولیس نے کرناٹک کے رائےچور سے بی جے پی ایم ایل اے شیوراج پاٹل کے خلاف ایک خاتون کونسلر کے اغوا کا مقدمہ درج کیا ہے۔ پولیس نے چہارشنبہ کو یہ جانکاری دی۔ شکایت کنندہ نے الزام لگایا کہ پاٹل نے کارپوریشن کی ایک رکن شہناز بیگم کو رائےچور کارپوریشن کے صدارتی انتخابات میں ووٹ دینے سے روکنے کے لیے اغوا کیا۔

 شہناز بیگم کے بیٹے اور شکایت کنندہ محمد علی نے الزام لگایا ہے کہ ایک پرائیویٹ اسپتال میں زیر علاج ان کی والدہ کو اسپتال سے ہی اغوا کیا گیا تھا۔ انہیں 26 مارچ کو اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ شکایت میں بتایا گیا کہ جس وقت شہناز کو اغوا کیا گیا اس وقت اس کا دوسرا بیٹا محمد عالم اور اس کا دوست بھی اسپتال میں موجود تھے۔

علی نے بتایا کہ ’منگل کے روز جب والدہ، بھائی اور ان کی ساس سے رابطہ کرنے کی کوشش کی گئی تو ان کے فون بند تھے، جس کے بعد اسپتال کے حکام سے پوچھا گیا تو انھوں نے کہا کہ آپ کے گھر والے سفید رنگ کی گاڑی میں انہیں لے کر چلے گئے ہیں‘‘۔

علی نے کہا ’’اگر میری ماں اور خاندان کے افراد کو کچھ ہوا تو پاٹل ذمہ دار ہوں گے۔ میرے گھر والوں کو فوری طور پر رہا کیا جانا چاہئے اور بی جے پی ایم ایل اے اور ان کے حامیوں کے خلاف قانونی کارروائی کی جانی چاہئے۔

علی نے شکایت کی کہ سی سی ٹی وی فوٹیج سے پتہ چلتا ہے کہ کار بی جے پی کے ایم ایل اے کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ انہوں نے بی جے پی ایم ایل اے کو کئی کال کی لیکن کسی کاجواب نہیں دیا گیا۔

ذریعہ
یواین آئی

تبصرہ کریں

Back to top button