کسانوں نے غازی پور سرحد خالی کردی

راکیش ٹکیت نے کہا کہ وہ غازی پور سے گھر جانے کے لئے تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں آج بڑا جذباتی ہوں۔ یہ مقام گزشتہ 13 ماہ سے میرا گھر بنا رہا۔

نئی دہلی: تین متنازعہ زرعی قوانین کے خلاف زائداز ایک سال سے احتجاج کررہے کسانوں نے چہارشنبہ کے دن غازی پور سرحد خالی کردی۔ اس موقع پر بھارتیہ کسان یونین (بی کے یو) کے قومی ترجمان راکیش ٹکیت موجود تھے۔ میڈیا سے بات چیت میں انہوں نے کہا کہ میں سبھی کا اور خاص طورپر بارڈر لنگر کا اہتمام کرنے والوں کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔ احتجاج معطل ہوا ہے‘ ختم نہیں ہوا۔

 یو این آئی کے بموجب راکیش ٹکیت نے کہا کہ وہ غازی پور سے گھر جانے کے لئے تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں آج بڑا جذباتی ہوں۔ یہ مقام گزشتہ 13 ماہ سے میرا گھر بنا رہا۔ میں کہنا چاہوں گا کہ کسانوں کے حقوق کی تحریک کبھی بھی نہیں رکے گی۔ ہم یہاں سے گھر جارہے ہیں لیکن میں ملک کے دیگر حصوں میں کسانوں کا ساتھ دوں گا‘ ان کے مسائل اٹھاؤں گا۔

 راکیش ٹکیت نے غازی پور بارڈر پر کاشتکاروں کے آخری جتھہ کی قیادت کی جو اپنے گھروں کی طرف روانہ ہوگیا۔ تمام خیمے اور عارضی پنڈال ہٹادیئے گئے۔

یہ بھی پڑھیں
ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button