کسان مورچہ کا پارلیمنٹ تک ٹریکٹر مارچ ملتوی

سنگھو سرحد پر احتجاج کے مقام پر کسان یونینوں کی ایک میٹنگ کے بعد انہوں نے مرکز سے اپیل کی کہ وہ ان کے ساتھ بات چیت دوبارہ شروع کرے تاکہ ان کے زیر التواء مطالبات کی یکسوئی ہوسکے۔

نئی دہلی: سمیوکت کسان مورچہ (ایس کے ایم) نے 29 نومبر کو پارلیمنٹ تک نکالے جانے والے اپنے ٹریکٹر مارچ کو ملتوی کردیا ہے اور مستقبل کا لائحہ عمل طئے کرنے آئندہ ہفتہ ایک میٹنگ منعقد کرے گا۔ کسان قائدین نے آج یہ بات بتائی۔

سنگھو سرحد پر احتجاج کے مقام پر کسان یونینوں کی ایک میٹنگ کے بعد انہوں نے مرکز سے اپیل کی کہ وہ ان کے ساتھ بات چیت دوبارہ شروع کرے تاکہ ان کے زیر التواء مطالبات کی یکسوئی ہوسکے۔

ایس کے ایم قائدین نے زور دے کر کہا کہ اقل ترین امدادی قیمت (ایم ایس پی) کیلئے قانونی ضمانت اور کسانوں کے خلاف کیسس سے دستبرداری کے ان کے مطالبات کو حکومت کی جانب سے قبو ل کئے جانے تک وہ اپنے احتجاج جاری رکھیں گے۔

واضح رہے کہ مارچ کو ملتوی کرنے ایس کے ایم نے یہ فیصلہ پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس کے آغاز سے دو دن پہلے کیا ہے، جس کے دوران زرعی قوانین کی منسوخی کیلئے ایک بل منظور کیا جائے گا۔

ہزاروں کسان گذشتہ ایک سال سے ان ہی قوانین کے خلاف احتجاج کررہے تھے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button