کسی صورت میں ہتھیار نہیں ڈالیں گے:ولادیمیر زیلنسکی

یوکرین کے صدر ویلادیمیر زیلنسکی نے روس پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ ڈونباس کے مشرقی علاقے کو تباہ کرنا چاہتا ہے جبکہ یوکرین کے ساحلی شہر ماریوپول میں موجود فورسز نے پیر کو اپنے حتمی دفاع کی تیاری کر لی ہے۔

کیف: یوکرین کے صدر ویلادیمیر زیلنسکی نے روس پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ ڈونباس کے مشرقی علاقے کو تباہ کرنا چاہتا ہے جبکہ یوکرین کے ساحلی شہر ماریوپول میں موجود فورسز نے پیر کو اپنے حتمی دفاع کی تیاری کر لی ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق روس ماریو پول میں اپنی بڑی فتح کی جانب بڑھ رہا ہے لیکن یوکرین نے لڑنے اور شہر کا ہر صورت دفاع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

واضح رہے کہ روسی افواج نے اتوار کو ازوفسٹال سٹیل پلانٹ میں موجود یوکرینی فوجیوں کو ہتھیار ڈال کر خود کو حوالے کرنے کا الٹی میٹم دیا تھا۔

دوسری جانب یوکرین کی حکومت نے ڈونباس کے شہریوں پر زور دیا ہے کہ وہ روسی جارحیت سے بچنے کے لیے مغربی علاقے میں منتقل ہو جائیں۔

یوکرین کے صدر زیلنسکی نے اتوار کی شام اپنے بیان میں کہا تھا کہ ’روسی فوجیں ہمارے ملک کے مشرقی علاقوں میں جلد جارحانہ کارروائی کرنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔ وہ حتمی طور پر ڈونباس کو تباہ کرنے کا منصوبہ بنا چکی ہیں۔

خیال رہے کہ روس کے یوکرین کے خلاف 26 فروری کو شروع ہونے والے ’خصوصی ملٹری آپریشن‘ کے بعد سے ماریوپول شہر نے غیرمتوقع طور پر سخت مزاحمت کا مظاہرہ کیا ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button