ہاردک پٹیل کی کوئی ساکھ نہ رہی: کانگریس

تاہم کانگریس کے ریاستی قائدین کا کہنا ہے کہ ہاردک پٹیل کے جانے سے ان کی پارٹی پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔ صدر پردیش کانگریس جگدیش ٹھاکر نے پی ٹی آئی سے بات چیت میں کہا کہ آپ سوشیل میڈیا کے تبصرے دیکھ لیں۔

احمدآباد: گجرات کے ایک سینئر کانگریس قائد نے دعویٰ کیا کہ گجرات اسمبلی الیکشن سے قبل کوٹہ احتجاجی قائد ہاردک پٹیل کے پارٹی چھوڑجانے کا‘ پارٹی کے انتخابی امکانات پر کوئی اثر نہیں پڑے گا کیونکہ ہاردک پٹیل اپنی ساکھ کھوچکا ہے۔ بعض سیاسی تجزیہ نگاروں نے ہاردک پٹیل کو محض ایک ٹی وی ٹائیگر قراردیا ہے۔

 2017 میں پاٹیداروں کے لئے ریزرویشن کے مطالبہ پر ہاردک پٹیل کے احتجاج سے کانگریس نے فیض پایا تھا۔ 2019میں ہاردک پٹیل کے کانگریس میں شامل ہونے کے بعد کانگریس کو پاٹیداروں کی تائید گھٹ گئی تھی۔ سیاسی ماہرین کا کہنا ہے کہ کانگریس کے لئے اِس بار بی جے پی سے ٹکر لینا بڑا مشکل ہے۔

 تاہم کانگریس کے ریاستی قائدین کا کہنا ہے کہ ہاردک پٹیل کے جانے سے ان کی پارٹی پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔ صدر پردیش کانگریس جگدیش ٹھاکر نے پی ٹی آئی سے بات چیت میں کہا کہ آپ سوشیل میڈیا کے تبصرے دیکھ لیں سبھی لوگ ہاردک کے کانگریس چھوڑکر جانے کی مخالفت کررہے ہیں۔

 وہ اپنی ساکھ سے محروم ہوچکا ہے لیکن سیاسی تجزیہ نگار دلیپ گوہل کا کہنا ہے کہ کانگریس کی پوزیشن پہلے ہی خراب ہے۔ اِس بار پاٹیدار کوٹہ احتجاج جیسا کوئی ماحول نہیں ہے جو 2017 کے الیکشن سے پہلے بنا تھا اور جس سے اسے گجرات اسمبلی میں اپنی نشستیں بڑھانے میں مدد ملی تھی۔

اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ 2019 کے لوک سبھا الیکشن اور اس کے بعد پنچایت و بلدیاتی الیکشن میں پاٹیداروں نے کانگریس کو ووٹ نہیں دیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ ہاردک کے جانے کا عملاً کوئی اثر نہیں پڑے گا۔ وہ اب ٹیلی ویژن ٹائیگر سے زیادہ کچھ نہیں۔ سیاسی قائدین‘ پرنٹ میڈیا کے عروج کے زمانہ میں پیپر ٹائیگر (کاغذی شیر) کی اصطلاح استعمال کرتے تھے۔ اب یہ اصطلاح بدل کر ٹی وی ٹائیگر ہوگئی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button