آئی اے ایس کیڈر رولس میں ترامیم کی تجویز کی مخالفت، وزیر اعظم کو جگن کا مکتوب

مرکزی حکومت کی جانب سے رولس میں ترامیم کی تجویز پر ردعمل کااظہار کرتے ہوئے چیف منسٹر جگن موہن ریڈی نے آئی اے ایس عہدیداروں کے ڈپیوٹیشن سے متعلق قواعد مجوزہ ترامیم سے پیدا ہونے والے عملی مسائل کا حوالہ دیا۔

امراوتی: آندھرا پردیش کے چیف منسٹر وائی ایس جگن موہن ریڈی نے وزیر اعظم نریندر مودی پر زور دیا ک ہ وہ آئی اے ایس (کیڈر) رولس بابتہ1954 میں مجوزہ ترمیم کے فیصلہ پر دوبارہ غور کریں اور مرکزی حکومت سے خواہش کی کہ وہ مرکز پر ڈپیو ٹیشن پر جانے والے عہدیداروں کو ریاستی حکومت سے اپنی اوپسی کے حصول کے موجودہ عمل کو برقرار رکھیں۔

مرکزی حکومت کی جانب سے رولس میں ترامیم کی تجویز پر ردعمل کااظہار کرتے ہوئے چیف منسٹر جگن موہن ریڈی نے آئی اے ایس عہدیداروں کے ڈپیوٹیشن سے متعلق قواعد مجوزہ ترامیم سے پیدا ہونے والے عملی مسائل کا حوالہ دیا۔ وزیر اعظم نریندر مودی کو اس ضمن میں جمعہ کے روز روانہ کردہ اپنے مکتوب میں جگن نے چند قواعد میں مجوزہ ترامیم پر ذہنی تحفظات کا اظہار کیا۔

ایک شق کے مطابق ریاست کے آئی اے ایس آفیسر کی تعیناتی پر ریاستی حکومت کی ناراضگی کو مرکز خاطر میں نہیں لاسکتا ہے۔ چیف منسٹر نے اس خیال کااظہار کیا کہ این او سی جاری کرنا عموماً ریاستی حکومت کا مسئلہ ہے کیونکہ باصلاحیت عہدیدار، ریاست کو ضرورت رہے گی۔

انہوں نے اپنے مکتوب میں کہاکہ قواعد میں ترامیم کی تجویز سے ریاست کے آئی اے ایس عہدیداروں کی خدمات کو مرکز کے حوالے کے منصوبہ سے متعلق جولچک ریاستی حکومت کے پاس ہے، وہ ختم ہوجائے گی مرکزی حکومت کے حکم پر راست کو فوری طور پر متعلقہ عہدیدار کو فارغ کرنا پڑے گا۔ اچانک اور بے وقت، محکمہ پراجکٹ کی قیادت سربراہ کو ہٹا نے سے اہم پراجکٹس متاثر ہوں گے جسے ریاستی حکومت نے شروع کیا تھا۔

 ریڈی نے مزید کہا کہ اس اقدام سے ڈپیوٹیشن کیلئے منتخب آئی اے ایس عہدیداروں کی زندگیوں پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ چیف منسٹر جگن موہن ریڈی نے وزیر اعظم نریندر مودی کی توجہ اس جانب مبذول کراتے ہوئے کہا کہ عہدیداروں (مرد/ خاتون) کی مرصی کے بغیر اچانک ڈیپوٹیشن کے احکام جاری کرنے کے اثرات،متعلقہ عہدیداروں کی زندگیوں پر بھی پڑیں گے۔

 ان مسائل سے ان کے افراد خاندان، بچے دوچار ہوں گے بلکہ ان بچوں کی تعلیم بھی متاثر ہوگی۔ جگن کی طرح پڑوسی ریاستوں تلنگانہ، ٹاملناڈو اور کیرالا کے وزرائے اعلیٰ نے بھی آئی اے ایس رولس ترامیم کی تجویز کی مخالفت کی اور اس سلسلہ میں وزیر اعظم نریندر مودی کو علیحدہ مکتوبات روانہ کئے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button