ایران میں ٹرین حادثہ‘ 21 مسافرین ہلاک

ایران میں چہارشنبہ کی صبح ایک مسافر بردار ٹرین کے پٹری سے اترجانے کے حادثہ میں کم ازکم 21 افراد ہلاک اور47 دیگر زخمی ہوگئے۔ زخمیوں میں بعض کی حالت نازک ہے۔

تہران: ایران میں چہارشنبہ کی صبح ایک مسافر بردار ٹرین کے پٹری سے اترجانے کے حادثہ میں کم ازکم 21 افراد ہلاک اور47 دیگر زخمی ہوگئے۔ زخمیوں میں بعض کی حالت نازک ہے۔ حکام نے یہ بات بتائی۔

ٹرین میں 350 مسافرین سفر کررہے تھے۔ صحرائی شہر طبس کے قریب الصبح ٹرین کے 7 ڈبوں کے منجملہ 4 پٹری سے اترگئے۔ ایرانی سرکاری ٹی وی نے یہ خبر دی۔ طبس‘ دارالحکومت تہران کے شمال مشرق میں 550کیلو میٹر (340میل) دور واقع ہے۔

بچاؤ ٹیمیں‘ ایمبولنس اور ہیلی کاپٹرس کے ساتھ دوردراز علاقہ میں پہنچ گئیں۔ 12 افراد شدید زخمی ہوئے ہیں جنہیں مقامی ہسپتال لے جایا گیا۔ ایرانی میڈیا نے گورنر طبس علی اکبر رحیمی کے حوالہ سے کہا کہ حادثہ میں کم ازکم 21 افراد ہلاک ہوئے۔ ایک زخمی نے بتایا کہ مسافرین‘ٹرین کے ڈبہ میں ہوا میں گولوں کی طرح اچھل رہے تھے۔

طبس سے 50 کیلو میٹر دور حادثہ اس مقام پر پیش آیا جہاں سے ریلوے لائن شہر کو وسطی شہر یزد سے جوڑتی ہے۔ حادثہ کی تحقیقات جاری ہیں۔ ابتدائی اطلاعات میں کہا گیا کہ ٹرین پٹری کے قریب موجود ایکسکیاویٹر سے ٹکراگئی حالانکہ یہ واضح نہیں ہوسکا کہ رات کے وقت ایکسکیاویٹر پٹری کے قریب کیوں رکھا گیا تھا۔

ایک عہدیدار نے کہا کہ ہوسکتا ہے یہ ایکسکیاویٹر کسی مرمتی پراجکٹ کا حصہ رہا ہو۔ ایران میں ریلوے لائن 14ہزار کیلو میٹر طویل ہے یعنی یہ ٹیکساس شہر کے سائز کی ڈھائی گنا ہے۔ ملک بھر میں ریلوے لائن کا جال بچھا ہوا ہے۔ ایران میں شاہراہوں پر سالانہ تقریباً 17 ہزار جانیں جاتی ہیں جو دنیا کا بدترین ٹریفک سیفٹی ریکارڈ ہے۔

صدر ایران ابراہیم رئیسی نے حادثہ پر دکھ کا اظہار کیا۔ انہوں نے حادثہ کی وجوہات کا پتہ چلانے تحقیقات کرانے کا اعلان کیا۔

تبصرہ کریں

Back to top button