ای ڈی دفتر پر کانگریس کا دھرنا جاری

ریونت ریڈی نے کہا کہ پارٹی کے اعلیٰ قائدین کے خلاف کوئی کیس نہیں ہے مگرمرکز کی بی جے پی حکومت انہیں 2024کے انتخابات میں شکست کے خوف سے نشانہ بنانے کی کوشش کررہی ہے۔

حیدرآباد: نیشنل ہیرالڈ کیس میں ای ڈی کی جانب سے راہول گاندھی سے پوچھ تاچھ کے خلاف کانگریس کا مرکزی ایجنسی کے علاقائی دفتر پر دھرنا دوسرے دن بھی جاری رہا۔ تلنگانہ کانگریس کے صدر ریونت ریڈی کی قیادت میں کانگریس کے کئی قائدین اور کارکنان قلب شہر بشیرباغ میں واقع ای ڈی دفتر کے روبرو دھرنا دے رہے ہیں۔

مظاہرین نے سیاہ اسکارفس پہن کر ای ڈی کی جانب سے کانگریس قائدین سونیا گاندھی اور راہول گاندھی کو سمن کی اجرائی پرمرکز کی نریندر حکومت کے خلاف نعرے بازی کی۔ ای ڈی جانب سے راہول گاندھی سے دہلی میں متواتر دوسرے روز بھی پوچھ تاچھ جاری ہے چنانچہ پارٹی نے بھی ان سے اظہار یگانگت کے لیے اپنا دھرنا جاری رکھا۔

 ریونت ریڈی نے کہا کہ وہ گاندھی خاندان کے ساتھ بی جے پی حکومت کی ناانصافی کے خلاف اپنی لڑائی جاری رکھیں گے۔ یہ دھرنا‘ راہول گاندھی سے ای ڈی کی پوچھ تاچھ مکمل ہونے تک جاری رہنے کا امکان ہے۔

 پارٹی کی مرکزی قیادت کی جانب سے راہول گاندھی کے ای ڈی دفتر سے باہر آنے تک احتجاج منظم کرنے کے اعلان کے جواب میں پیر کو ٹی پی سی سی نے حسین ساگر کے کنارے نیکلس روڈ پر بڑی ریالی منظم کی تھی۔ مظاہرین نے ای ڈی سے سونیا گاندھی اور راہول گاندھی کے خلاف جاری سمن سے فوری دستبرداری اختیار کرنے کا مطالبہ کیا۔

ریونت ریڈی نے کہا کہ پارٹی کے اعلیٰ قائدین کے خلاف کوئی کیس نہیں ہے مگرمرکز کی بی جے پی حکومت انہیں 2024کے انتخابات میں شکست کے خوف سے نشانہ بنانے کی کوشش کررہی ہے۔

 ٹی پی سی سی صدر نے کہا کہ سونیا گاندھی اور راہول گاندھی دونوں‘ مودی حکومت کی عوام دشمن پالیسیوں کے خلاف بے باکی سے تنقید کرتے رہے ہیں چنانچہ حکومت انہیں جھوٹے کیسس میں پھنسانے کی فراغ میں تھی۔

تبصرہ کریں

Back to top button