تائیوان کو تنہا کرنے کی اجازت ہم چین کو نہیں دیں گے: پیلوسی

دورہ تائیوان سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ تائیوان ایک آزاد ملک ہے اور کوئی اور ملک اس معاملے میں دخل اندازی کا کوئی حق نہیں رکھتا کہ کون وہاں کا دورہ کر رہا ہے۔

واشنگٹن: امریکی کانگریس کی اسپیکر نینسی پلوسی نے کہا ہے کہ ہم نے تائیوان کا دورہ اپنی پالیسی تبدیل کرنے کے لئے نہیں کیا۔ ہم ابھی تک واحد چین پالیسی کی حمایت کرتے ہیں۔انہوں نے کہا ہے کہ چین کو، تائیوان کو تنہا کرنے کی، اجازت نہیں دی جائے گی۔

دورہ تائیوان کے بعد پیلوسی نے پہلی دفعہ این بی سی چینل کی براہ راست نشریات میں شرکت کی۔ دورہ تائیوان سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ تائیوان ایک آزاد ملک ہے اور کوئی اور ملک اس معاملے میں دخل اندازی کا کوئی حق نہیں رکھتا کہ کون وہاں کا دورہ کر رہا ہے۔

پیلوسی نے کہا ہے کہ ”وہ تائیوان والوں کو یہ کہہ سکتے ہیں کہ آپ عالمی ادارہ صحت میں شامل نہیں ہو سکتے لیکن اس بات میں دخل اندازی نہیں کر سکتے کہ کون تائیوان کا دورہ کرے اور کون نہ کرے۔ ہم چین حکومت کو، تائیوان کو تنہا کرنے کی، اجازت نہیں دے سکتے”۔

چھ رکنی وفد کے ہمراہ دورہ تائیوان کرنے اور بین الپارلیمانی رابطے کی اہمیت پر بات کرتے ہوئے پیلوسی نے کہا ہے کہ ”بحیثیت اسپیکر دورہ تائیوان کے لئے مجھے اپنے منتخب وفد اور ڈیموکریٹک اور رپبلکن دونوں پارٹیوں کا بھاری تعاون حاصل تھا۔ تائیوان میں ہزاروں افراد نے ہمارا بہت خوبصورت خیر مقدم کیا”۔

انہوں نے کہا ہے کہ ”امریکہ کی چین پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ ہم نے تائیوان کا دورہ اپنی پالیسی تبدیل کرنے کے لئے نہیں کیا۔ ہم ابھی تک واحد چین پالیسی کی حمایت کرتے ہیں۔ اس میں بے اطمینان ہونے والی کوئی بات نہیں ہے”۔

پیلوسی نے کہا ہے کہ ”اسمبلیاں، اپنے دوست ممالک اور جمہوریتوں کے ساتھ تعاون کا اظہار کر سکتی ہیں۔ تائیوان پالیسی قانون کے مطابق بھی تائیوان ہمارا دوست ہے”۔

تبصرہ کریں

Back to top button