تبلیغی جماعت پر امتناع کے فیصلہ پر نظرثانی کی جائے:دارالعلوم دیوبند

پہلی مرتبہ دارالعلوم دیوبند نے سعودی حکومت کی کھلے عام مذمت کی۔ سعودی عرب کی وزارت ِ مذہبی امور حال میں تبلیغی جماعت کو دہشت گردی کا دروازہ قراردے کر ممنوع کرچکی ہے۔

ایودھیا: دارالعلوم دیوبند (ضلع سہارنپور‘ یوپی) نے تبلیغی جماعت پر امتناع کے سعودی عرب کے فیصلہ پر تنقید کی ہے۔ مہتمم مولانا ابوالقاسم نعمانی نے سعودی عرب سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے فیصلہ پر نظرثانی کرے ورنہ مسلمانوں میں غلط پیام جائے گا۔

پہلی مرتبہ دارالعلوم دیوبند نے سعودی حکومت کی کھلے عام مذمت کی۔ سعودی عرب کی وزارت ِ مذہبی امور حال میں تبلیغی جماعت کو دہشت گردی کا دروازہ قراردے کر ممنوع کرچکی ہے۔

ممتاز مسلم جہدکار ظفر سریش والا نے پی ٹی آئی سے کہا کہ مجھے‘ سعودی عرب کے فیصلہ پر حیرت ہے کیونکہ تبلیغی جماعت‘ کسی بھی انتہاپسند نظریہ کی مخالف رہی ہے۔ اس نے تمام جدید جہادی تحریکوں کو ناپسند کیا۔ طالبان تک کئی مرتبہ تبلیغی جماعت کے خلاف بول چکے ہیں۔

سعودی عرب کا تبلیغی جماعت کو ”گیٹ وے آف ٹیررازم“ کہنا ناقابل یقین اور ناقابل ِ قبول ہے۔ برطانیہ سے ویڈیو پیام میں تبلیغی جماعت مرکز حضرت نظام الدین ؒ کے ترجمان سمیرالدین قاسمی نے کہا کہ یہ تبلیغی جماعت پر بڑا الزام ہے۔ جماعت کا دہشت گردی سے کوئی تعلق نہیں۔

تبلیغی جماعت وہ گروپ ہے جو دہشت گردی کو روکتا ہے‘ اس کی مذمت کرتا ہے اور اس سے لاتعلقی کا اظہار کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم کسی کو بھی کسی مذہب‘ فرقہ اور ملک کے خلاف بولنے نہیں دیتے۔ ہم صرف ارکان ِ اسلام کی بات کرتے ہیں۔ ہمارا کوئی بھی آدمی کسی بھی قسم کی دہشت گرد سرگرمیوں میں کبھی بھی ملوث نہیں رہا۔

سعودی حکومت کو گمراہ کیا گیا ہے۔ تبلیغی جماعت کے ایک دھڑے سے وابستہ محمد میاں نے کہا کہ ہماری جماعتیں دنیا بھر میں یہاں تک کہ سعودی عرب میں بھی کام کررہی ہیں۔ اراکین ِ جماعت مسلمانوں کو رسول اکرمؐ کی دکھائی راہ ِ حق پر لانے کے لئے کام کررہے ہیں۔

ہم سعودی حکومت کے فیصلہ پر تبصرہ نہیں کریں گے لیکن ہماری جماعتیں سعودی عرب میں بدستور کام کرتی رہیں گی۔ دارالعلوم ندوۃ العلماۂ کے سینئر استاد مولانا فخر الحسن خان نے کہا کہ ابھی تو ہمیں میڈیا سے امتناع کی خبر ملی ہے۔ ہم کسی نتیجہ پر پہنچنے سے قبل سعودی عرب میں اپنے آدمیوں سے بات کریں گے۔ تبلیغی جماعت مولانا محمد الیاس کاندھلوی مرحوم نے قائم کی تھی۔

مولانا الیاس مرحوم نے دہلی کے قریب میوات میں کافی کام کیا تھا۔ علمائے دیوبند کی اس جماعت کا مسلک وہابی ہے۔ وہابی ملک سعودی عرب سے جماعت کے تعلقات خوشگوار رہے ہیں۔ گزشتہ برس کورونا وباء کے دوران ہندوستان میں تبلیغی جماعت نشانہ ئ تنقید بنی تھی۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button