حجاب تنازعہ‘ دو مسلم طالبات نے این او سی حاصل کرلیا

رائے نے بتایا کہ ایک ایم ایس سی (کیمسٹری) کی مسلم طالبہ جس کا تعلق کیرالا سے ہے‘ نے بھی ناسازی صحت کی وجہ سے ٹرانسفر سرٹیفکیٹ حاصل کرلیا ہے۔ این او سی کی اجرائی کے بعد طلبا دوسرے انڈر گریجویٹ کالجوں میں شرکت کرسکتے ہیں۔

بنگلورو: دو مسلم طالبات جنہوں نے شہر کے یونیورسٹی کالج میں حجاب پر امتناع کے خلاف احتجاج کیا تھا‘ دوسرے کالجوں میں داخلہ کے لئے کوئی اعتراض نہیں کے سرٹیفکیٹس (این او سی) حاصل کرلئے ہیں جبکہ ایک طالبہ کو ٹرانسفر سرٹیفکیٹ جاری کردیا گیا ہے۔

 3 لڑکیوں میں سے دو نے پریس کانفرنس منعقد کی اور کیمپس میں یکساں قواعد پر سختی سے عمل آوری کے یونیورسٹی کے فیصلہ پر سوال کیا۔ ایک دوسری لڑکی جو پریس کانفرنس میں شامل ہوگئی‘ کالج کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے معذرت کا اظہار کیا اور آن لائن کلاسس میں شرکت کررہی ہے۔

کالج کے پرنسپل اناسویا رائے نے یہ بات بتائی۔ رائے نے بتایا کہ ایک ایم ایس سی (کیمسٹری) کی مسلم طالبہ جس کا تعلق کیرالا سے ہے‘ نے بھی ناسازی صحت کی وجہ سے ٹرانسفر سرٹیفکیٹ حاصل کرلیا ہے۔ این او سی کی اجرائی کے بعد طلبا دوسرے انڈر گریجویٹ کالجوں میں شرکت کرسکتے ہیں۔

اگر کوئی دوسرا کالج داخلہ کی منظوری دے تو ٹرانسفر سرٹیفکیٹ اجراء کیا جائے گا۔ منگلور یونیورسٹی کے وائس چانسلر پی ایس یداپادیاتھا نے اعلان کیا تھا کہ مسلم طالبات اگر یکساں قواعد کی پابندی کرنے پر رضامند نہ ہوں تو ان کے لئے یونیورسٹی خصوصی انتظامات کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ اگر طالبات ایسے کالجوں یں شرکت کی خواہاں ہوں جہاں پابندیاں نہ ہوں تو اس تعلق سے بھی انتظامات کئے جائیں گے۔

تبصرہ کریں

Back to top button