حیدرآباد میں 2072 تک پینے کے پانی کا کوئی مسئلہ نہیں: کے ٹی آر

کے ٹی آر نے شہر حیدرآباد میں پینے کے پانی کی ضروریات کی تکمیل کے لئے سُنکے سیلاان ٹیک ویل کے کاموں کا ضلع نلگنڈہ کے ناگرجناساگر میں سنگ بنیاد رکھا۔

حیدرآباد: تلنگانہ کے آئی ٹی اور ماحولیات کے وزیر تارک راما راو نے واضح کیا ہے کہ حکومت،شہرحیدرآباد کے لئے 2072تک پانی کی کمی نہ ہونے کو یقینی بنانے کے لئے منصوبہ بنارہی ہے۔اس کے لئے حیدرآباد کے اطراف پائپ لائنس بچھائی جارہی ہیں۔

مستقبل میں شہرحیدرآباد میں 100کلومیٹر تک پینے کے پانی کی سپلائی کو یقینی بنانے کے اقدامات کئے جارہے ہیں۔آوٹررنگ روڈ اورباہری علاقوں میں بھی پانی کی سپلائی کے اقدامات کئے جارہے ہیں۔انہوں نے شہر حیدرآباد میں پینے کے پانی کی ضروریات کی تکمیل کے لئے سُنکے سیلاان ٹیک ویل کے کاموں کا ضلع نلگنڈہ کے ناگرجناساگر میں سنگ بنیاد رکھا۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیر موصوف نے کہا کہ حیدرآباد،رنگاریڈی اورمیڑچل کے عوام کے لیے آج کا دن کافی اچھا ہے۔اچھا دن ہے۔ میٹرو واٹر سپلائی اینڈ سیوریج بورڈ کے 6000 کروڑ کے ترقیاتی کام جاری ہیں۔ انہوں نے کہاکہ فی الحال حیدرآباد میں پانی کی طلب 37 ٹی ایم سی ہے، 2072 تک یہ طلب بڑھ کر تقریباً 71 ٹی ایم سی ہونے کا امکان ہے۔

یہ بھی پڑھیں

 انہوں نے کہا کہ سُنکے سیلا میں 1,450 کروڑ روپے کی تخمینہ لاگت سے پینے کے پانی کی ضروریات کے لیے پمپس اور موٹروں سمیت 16 ٹی ایم سی لفٹ اریگیشن کے کام کئے جائیں گے۔ انہوں نے واضح کیا کہ یہ پروجیکٹ آئندہ موسم گرما تک مکمل ہوجائے گا اور حیدرآباد کے لوگوں کو پینے کا پانی فراہم کرے گا۔

تبصرہ کریں

Back to top button