وزیر اعظم کی سیکوریٹی کوتاہی سے کانگریس میں کس کو دلچسپی تھی: سمرتی ایرانی

۔ ایرانی نے کہا کہ پنجاب کے ڈی جی پی نے مودی کی سیکوریٹی ٹیم کو راستہ پوری طرح صاف ہونے کا پیام دیا تھا اور حیرت ظاہر کی کہ انہوں نے کیوں ایسا پیام دیا۔ انہوں نے پنجاب کے چیف منسٹر چرنجیت سنگھ چنی کے بیان پر بھی تنقید کی۔

نئی دہلی: ریاستی پولیس کی جانب سے اطلاع کے باوجود وزیر اعظم نریندر مودی کے سیکوریٹی خطرہ کو دانستہ طور پر نظر انداز کرنے کا بی جے پی نے آج پنجاب کی کانگریس حکومت پر الزام عائد کیا اور دریافت کیا کہ اس کوتاہی سے اپوزیشن پارٹی کے کس لیڈر کو فائدہ حاصل ہوا ہے؟ ۔

مرکزی وزیر و بی جے پی لیڈر سمرتی ایرانی نے ایک نئے چینل کی جانب سے تشہیر کردہ ویڈیو کا حوالہ دیا، جس میں دکھایا گیا کہ پنجاب پولیس کے عہدیدار اپنے اعلیٰ عہدیداروں کو مطلع کررہے ہیں کہ احتجاجی، مودی کے قافلہ کا راستہ روک رہے ہیں، لیکن کوئی کارروائی نہیں کی جارہی ہے۔

ایک پریس کانفرنس کو مخاطب کرتے ہوئے سمرتی ایرانی نے کہا کہ یہ انتہائی تشویش کی بات ہے کہ پنجاب پولیس کے عہدیداروں نے اظہار کیا ہے کہ وزیر اعظم کی سیکوریٹی کو خطرہ کے بارے میں اظہار کرنے کیونکر وہ کانگریس حکومت اور پنجاب کے انتظامیہ کے ساتھ مسلسل ربط میں رہے۔

 سوال یہ ہے کہ یہ ظاہر کرتا ہے کہ کانگریس کی زیرقیادت پنجاب حکومت میں وزیر اعظم کو درپیش سیکوریٹی خطرہ سے گریز بے نقاب ہوا ہے۔ ایرانی نے کہا کہ پنجاب کے ڈی جی پی نے مودی کی سیکوریٹی ٹیم کو راستہ پوری طرح صاف ہونے کا پیام دیا تھا اور حیرت ظاہر کی کہ انہوں نے کیوں ایسا پیام دیا۔

انہوں نے پنجاب کے چیف منسٹر چرنجیت سنگھ چنی کے بیان پر بھی تنقید کی، جس میں انہوں نے اس واقعہ کے بارے میں پارٹی لیڈر پرینکا گاندھی وڈرا کو مطلع کیا اور سوال کیا کہ ایسا کیوں کیا گیا؟ کیوں کہ کانگریس جنرل سکریٹری ایک عام شہری ہے۔ ایرانی نے سوال کیا کہ ایک عام شہری کو وزیر اعظم کی سیکوریٹی کے معاملہ میں کیا دلچسپی ہے؟۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.