امبیڈکر مجسمہ کو نقصان پہچانے پربھینسہ میں دلتوں کا احتجاج

بھینسہ میں حالات مکمل قابو میں ہیں۔ خاطی کو گرفتار کرتے ہوئے تمام زاویوں سے تحقیقات کی جارہی ہیں خاطی کے خلاف پی ڈی ایکٹ لگایا جائے گا۔

بھینسہ:بس اسٹانڈ کے روبرو واقع امبیڈکر مجسمہ کو ایک شخص نے نقصان پہنچاتے ہوئے ایک ہاتھ،آنکھ اور کتاب کو توڑنے کی اطلاع بھینسہ میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی اور افواہوں کا بازار گرم ہوگیا۔ دلت طبقہ کے سینکڑوں افراد بشمول نوجوانوں،خواتین اور ذمہ داران مقام واقعہ پہنچ گئے‘ بڑے پیمانے پر بس اسٹانڈ کے روبرو اہم شاہراہ پر راستہ روکو احتجاج شروع ہوگیا۔

ایڈیشنل ایس پی کرن کھرے سرکل انسپکٹر پراوین کمار،رورل سرکل انسپکٹر چندرشیکھر،سب انسپکٹران گنگارام،محمد غوث، درشن سرنیواس، شیوا،محمد سراج، صادق حْسین،سائی کرن رورول بھاری پولیس کے ساتھ پہنچ کراحتجاجیوں کو سمجھانے کی کوشش کی لیکن وہ بضد تھے۔ پولیس کی موجودگی میں ہی پتھروں سے آر ٹی سی کے کی 3  بسوں کے  شیشے توڑ دیئے گئے۔

بس اسٹانڈ کے پاس موجود فروٹ کی بنڈیوں، دْکانوں کو زبردستی بند کرواتے ہوئے نعرے بازی کی گئی۔ حالات کو دیکھتے ہوئے ا پولیس نے ہلکا سا لاٹھی چارج کرکے احتجاجیوں کو منتشر کرنے کی کوشش کی لیکن احتجاجی اپنا احتجاج جاری رکھے۔ایڈیشنل ایس پی نے میڈیا کو بتایاکہ ایک شخص نے امبیڈکر مجسمہ کو نقصان پہنچایا جس پر دلت طبقہ کی جانب سے احتجاج کرتے ہوئے آرٹی سی بسوں کو نقصان پہنچایا گیا۔

پولیس فوراً متحرک ہوکر حالات کو قابو کرنے میں کامیاب ہوگئی۔ بھینسہ میں حالات مکمل قابو میں ہیں۔ خاطی کو گرفتار کرتے ہوئے تمام زاویوں سے تحقیقات کی جارہی ہیں خاطی کے خلاف پی ڈی ایکٹ لگایا جائے گا۔ انھوں نے عوام سے افواہوں پر دھیان نہ دینے اور سوشل میڈیا پر کسی بھی قسم کے متنازعہ پوسٹ وائرل نہ کرنے کی اپیل کرتے ہوئے سخت قانونی کاروائی کا انتباہ دیا۔

بھینسہ میں دفعہ 144 نافذ کردیا گیا۔ شہر میں پولیس طلایہ گردی شدت کے ساتھ جاری ہے۔دفعہ 144 کا اعلان وجرا گاڑی کے ذریعہ کیا جارہاہے اور عوام خوف و ہراس کے ماحول میں کاروباری اور تجارتی اداروں کو بند کرتے ہوئے دیکھے گئے۔ چھوٹی بڑی دکانیں بند ہوگئی۔ آرٹی سی بس سرویس کو بس اسٹانڈ سے آمد و رفت کو معطل کردیا گیا۔

 مقام واقعہ پہنچ کر آر ڈی او لوکیشور راؤ، تحصیلدار وشمبر، آر آئی پراوین کمار پہنچکر حالات کا جائزہ لیا۔واقعہ کے فورا بعد متاثرہ امبڈکر مجسمہ کو پولیس نے کپڑے سے ڈھانک دیا۔ احتجاج کے دوران امبیڈکرکے تصویر کو دودھ سے نہلایا گیا۔ دلت قائدین سائیلومیسیکر،شنکر چندرے،بھیم ڈونگرے،راہول دگڑے،دیویداس ہسڈے ایڈوکیٹ، مانک دگڑے، گریدھر جنگمے کے علاوہ دیگر نے پولیس اسٹیشن پہنچکر واقعہ کی مکمل تحقیقات کرنے کا مطالبہ کیا۔

احتجاج کے دوران 2  دو نوجوان انصاف کا مطالبہ کرتے ہوئے پٹرول ڈالکرخود کو آگ لگانے کی کوشش کی لیکن وہاں موجود افراد نے انھیں بچالیا اورسرکاری دواخانہ منتقل کردیا۔5:30 بجے تک بھی یہاں بڑے پیمانے پر احتجاج جاری ہے۔ پولیس کا وسیع بندوبست دیکھا جارہا ہے۔ جبکہ احتجاجیوں کی جانب سے دیگر مقامات پر احتجاج شروع کرنے پر پولیس کواحتجاجیوں کو منتشر کرنے لاٹھی چارج کرنا پڑا۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.