تلگو اکیڈیمی ایف ڈی فراڈ اسکام،6ملزمین گرفتار

مشنر پولیس انجنی کمار نے مزید بتایا کہ ملزم سائی کمار دھوکہ دہی کا اصل سرغنہ ہے۔ اس سے قبل سائی کمار دھوکہ دہی کے 3واقعات میں ملوث بتایا گیا ہے۔

حیدرآباد: سٹی پولیس نے تلگو اکیڈیمی حمایت نگر کے فکسڈ ڈپازٹس ریسپٹس (ایف ڈی آر) اسکام کے سلسلہ میں 6 سے زائد افراد کو جن میں شہر کی کینرا بینک کی خاتون منیجر بھی شامل ہے، گرفتار کرلیا ہے۔ اس کیس میں 4ملزمین کو پہلے ہی گرفتار کیا جاچکا ہے جبکہ مابقی ملزموں کو آج گرفتار کیا گیا ہے۔ سی سی ایس حکام نے ان افراد کو گرفتار کیا ہے۔

سٹی پولیس کمشنر انجمی کمار نے چہارشنبہ کے روز یہاں صحافیوں کو یہ بات بتائی۔ انہوں نے بتایاکہ گرفتار شدگان میں ایس رمیش عرف روی، ایڈمنسٹریٹیو آفیسر انچارج اکاؤنٹس آفیسر تلگو اکیڈیمی، ایم سدھنا، برانچ منیجر کینرا بینک  کو ٹی سائی کمار ساکن حیدرآباد، رئیل اسٹیٹ متوطن ایسٹ گوداوری،50سالہ این وینکٹ رامن متوطن تنکو ضلع ویسٹ گوداوری،43 سالہ وینکٹیشور راؤ عرف ڈاکٹر وینکٹ عرف راجیش آر ایم پی ڈاکٹر اور رئیل اسٹیٹ متوطن ستو پلی ضلع کھمم اور 35سالہ سوما شیکھر عرف راج کمار متوطن دھرما ورم پیشہ رئیل اسٹیٹ شامل ہیں۔

 کمشنر پولیس انجنی کمار نے مزید بتایا کہ ملزم سائی کمار دھوکہ دہی کا اصل سرغنہ ہے۔ اس سے قبل سائی کمار دھوکہ دہی کے 3واقعات میں ملوث بتایا گیا ہے۔ سال 2012 میں اے پی مائنا ریٹی ویلفیر سوسائٹی ایف ڈی آر س دستبرداری کیس کی تحقیقات سی آئی ڈی کررہی ہے۔ 2005 کے اے پی ہاوزنگ بورڈ اسکام تقریباً6 کروڑ کا ہے، سی بی آئی کررہی ہے اور 25کروڑ ایف ڈی آر دھوکہ دہی کیس ناردرن کول فیلڈ چینائی کیس کی تحقیقات سی بی آئی کررہی ہے۔ ان تینوں میں سائی کمار ملوث بتایا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ 2012 کے اے پی مائنا ر یٹی ویلفیر سوسائٹی کے ایف ڈی آر کیس میں وینکٹ رمنا شریک جرم تھا۔ رئیل اسٹیٹ میں پیسہ لگانے کے بعد کمار مقروض ہوگیا۔ وہ، ایف ڈی آر کو توڑنے (دستبرادری)کے طریقہ کار سے بخوبی واقف تھا۔ وہ ماضی میں بھی اس طرح کے دھوکہ دہی کیس میں ملوث بتایا گیا ہے۔ اُس نے اپنے ایک دوست سے ربط پیدا کیا جو بینک میں ڈپازٹس اور لونس کے شعبہ میں بطور ایجنٹ کام کرتا ہے۔ اُس نے ایک نامعلوم شخص سے سائی کمار کوملایا اور کہا کہ یہ نامعلوم شخص اس کیلئے فکسڈ ڈپازٹس کا نظم کرسکتا ہے۔ کمار نے تلگو اکیڈیمی کے اکاونٹس آفیسر رمیش سے ربط پیدا کیا جہاں جب بھی اکیڈیمی کو فکسڈ ڈپارٹس کرانے کی ضرورت رہتی وہ، ایجنٹ سے ربط پیدا کرتا تھا۔ اکاؤنٹس آفیسر رمیش سے چیک اور ریکویسٹ لیٹرس حاصل کرنے کے بعد وینکٹ رمنا اور سائی کمار، دیگر دوسرے ساتھیوں کی مدد سے جعلی ایف ڈی آر اور ریکویسٹ لیٹرس تیار کرتے تھے۔ اور فکسڈ ڈپازٹس کی مدت کے دوران مختلف رقم کے جعلی ریکویسٹ لیٹرس بینک کوروانہ کرتے تھے۔

جعلی ایف ڈی آر طبع کرائے جاتے تھے اور ان جعلی ایف ڈی آر کو واپس تلگواکیڈیمی روانہ کئے جاتے تھے۔ بینک منیجرس یونین بینک اور کینرا بینک بالترتیب شیخ مستان ولی جنہیں یکم / اکتوبر کو گرفتار کیا گیا ہے، اور شریمتی سادھنا، وینکٹ رامن اور اس کے ساتھیوں کو فکسڈ ڈپازٹس ریسپٹس کے یو ٹی آر نمبرات سے واقف کراتے تھے۔ جو وینکٹ رامن اور اس کے ساتھی ان جعلی ایف ڈی آر کو استعمال کرتے تھے۔ اس کے بعد متعلقہ بینک سے ایف ڈی کو توڑتے ہوئے رقم حاصل کرنے کیلئے دوبارہ جعلی ایف ڈی آر تیار کیا کرتے تھے اور اسے متعلقہ بینک منیجرس کے پاس روانہ کرتے تھے۔ اور ایف ڈی کی رقم، اے پی مرکنٹائل کوآپریٹیو کریڈٹ سوسائٹی کے نام سے حاصل کی جاتی تھی۔ سوما شیکھر یا ڈاکٹر وینکٹ سوسائٹی سے نقد رقم حاصل کرتے تھے۔ اے پی مرکنٹائل کو آپریٹیو سوسائٹی میں تلگواکیڈیمی کے نام سے ایک فرضی اکاؤنٹ کھولا گیاتھا۔

بتایا جاتا ہے کہ سوسائٹی کے ایم ڈی ستیہ نرائنہ کو منوا کر فرضی آئی ڈی سے یہ اکاونٹ کھولا گیا تھا۔ سوما شیکھر نے خود کو ڈائرکٹر آف تلگواکیڈیمی بتاتے ہوئے یہ اکاؤنٹ کھلوایا تھا۔انجنی کمار نے مزید بتایا کہ دسمبر2020سے ستمبر2021 کے درمیان تقریباً64.50 کروڑ روپے کا غبن کیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ قبل ازیں سی سی ایس نے شیخ مستان ولی چیف منیجر یونین بینک آف انڈیا کا روان حیدرآباد، ستیہ نارائنہ چیرمن ومنیجنگ ڈائرکٹر اے پی مرکنٹائل کو آپریٹیو کریڈٹ سوسائٹی کے پدماوتی منیجر آپریشن اے پی مرکنٹائل کو آپریٹیو کریڈٹ سوسائٹی لمیٹڈ حیدرآباد اور سید معین الدین ریلیشن شپ منیجر اے پی مرکنٹائل کوآپریٹیو کریڈٹ سوسائٹی لمیٹڈ کو گرفتار کیا جاچکا ہے اور پولیس نے ان کا ریمانڈ بھی حاصل کیا ہے۔ تحقیقات میں اے سی پی منوج اور (5) سی سی ایس ٹیمیں کام کررہی ہیں۔اس پریس کانفرنس میں ایڈیشنل کمشنر کرائمس شیکھا گوئل اور جوائنٹ کمشنر پولیس سی سی ایس اویناش موہنتی بھی موجودتھے۔ کمشنر پولیس نے بتایا کہ مزید9 افراد کو جو اس اسکام میں ملوث بتائے گئے ہیں، بہت جلد گرفتار کرلیا جائے گا۔ اویناش موہنتی نے بتایا کہ کچھ رقم بھی ضبط کی گئی اور ملزمین نے اس رقم سے جائیدادیں بھی خریدی ہیں۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.