روسی حملہ میں یوکرین میں 198 شہری ہلاک

یوکرین کے وزیر خارجہ دیمترو کولیبا نے الزام عائد کیا کہ کیف میں ایک مزائل رہائشی عمارت سے ٹکرائی۔ انہوں نے کہا کہ پرامن شہر میں کل رات روس کی گراؤنڈ فورسس نے حملے کئے۔

کیف: یوکرینی وزیر صحت وکٹر لیاشکو نے ہفتہ کے دن کہا کہ روس کے حملہ میں 198 شہری بشمول 3 بچے ہلاک ہوئے۔

انہوں نے فیس بک پوسٹ میں کہا کہ تازہ اعدادوشمار کے بموجب حملہ آوروں نے 198 افراد بشمول 3 بچوں کو ہلاک کردیا۔ 1115 افراد بشمول 33 بچے زخمی ہوئے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ شہر خرسون میں ایک بم شیلٹر میں بنائے گئے میٹرنٹی ہاسپٹل میں 2 بچے پیدا ہوئے۔ زندگی چلتی رہتی ہے۔ کوئی بھی ہمیں ہرانہیں سکتا۔ بی بی سی نے کیف شہر کے میئر کے حوالہ سے کہا کہ کیف میں کل رات لڑائی میں 35 افراد بشمول 2 بچے زخمی ہوئے۔

قبل ازیں یوکرین کے وزیر خارجہ دیمترو کولیبا نے الزام عائد کیا کہ کیف میں ایک مزائل رہائشی عمارت سے ٹکرائی۔ انہوں نے کہا کہ پرامن شہر میں کل رات روس کی گراؤنڈ فورسس نے حملے کئے۔

ایک مزائل رہائشی عمارت سے ٹکرائی۔ میں دنیا سے مطالبہ کرتا ہوں کہ روس کو پوری طرح یکا و تنہا کردیا جائے۔ اس کے سفیروں کو نکال دیا جائے۔

اس کی تیل برآمدات پر پابندی لگادی جائے۔ اس کی معیشت کو تباہ کردیا جائے۔ روسی جنگی مجرموں کا راستہ روکا جائے۔ وزیراعظم ڈینس شمہل نے کہا کہ آج ایک روسی مزائل کیف میں ایک اپارٹمنٹ بلڈنگ سے ٹکرائی۔

گزشتہ 2 دن میں یوکرینی شہروں میں دواخانوں‘ کنڈرگارٹنس اور یتیم خانوں پر بمباری ہوئی ہے۔ ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ دنیا‘ فیصلہ کن جواب دے۔

وہ روس کو اس کی مجرمانہ حرکتوں کے لئے یکا و تنہا کردے۔ اسی دوران روسی مسلح افواج نے ملک کے جنوب میں یوکرینی شہر میلیٹوپول پر مکمل کنٹرول حاصل کرلیا۔ روس کی وزارت ِ دفاع کے ترجمان نے یہ بات بتائی

تبصرہ کریں

Back to top button