صدارتی الیکشن، اپوزیشن کے اجلاس میں کے سی آر کی عدم شرکت

کے سی آر نے ممتا بنرجی کو پیام روانہ کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کے صدارتی امیدوار کے خلاف اپوزیشن کے مشترکہ امیدوار کے نام کو قطعیت دینے کی بابت طلب کردہ اجلاس میں کانگریس کو مدعو کرنے پر انہیں اعتراض ہے۔

حیدرآباد: تلنگانہ کی حکمران جماعت ٹی آر ایس نے صدارتی الیکشن پر اپوزیشن کی حکمت عملی پر غور وخوض کے لئے نئی دہلی میں آج طلب کردہ اجلاس میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس اجلاس میں مغربی بنگال کی چیف منسٹر ممتا بنرجی نے 15 جون کو نئی دہلی میں طلب کیا تھا۔

 تلنگانہ کے چیف منسٹرو ٹی آرایس کے سربراہ کے چندر شیکھر راؤ نے پارٹی کے سینئر قائدین کے ساتھ مشاورت کے بعد یہ فیصلہ کیا ہے۔ اجلاس میں کانگریس کو مدعو کرنے پر ٹی آر ایس، ممتا بنرجی سے ناخوش ہے۔ پارٹی نے حوالہ دیا ہے کہ وہ بی جے پی اور کانگریس سے یکساں دوری بنائے رکھی ہوئی ہے۔

 ٹی آر ایس قیادت واضح کردیا کہ وہ کسی ایسی مشق کا حصہ نہیں بنے گی جس میں کانگریس شریک ہوگی۔ ترنمول کانگریس لیڈر ممتا بنرجی نے 15جون چہارشنبہ کو 3بجے سہ پہر نئی دہلی کے کانسٹی ٹیوشن کلب میں تمام اپوزیشن پارٹیوں کو مدعو کیا تھا۔

 انہوں نے 8ریاستوں کے چیف منسٹروں کو بھی جن کا تعلق اپوزیشن سے ہے، اجلاس میں شرکت کی دعوت دی تھی۔پہلے یہ قیاس لگایا گیا تھا کہ کے سی آر، اس اجلاس سے دوری اختیار کریں گے مگر وہ ٹی آر ایس کے کسی قائد کو دہلی روانہ کریں گے تاہم پارٹی کے قائدین کے ساتھ کئی گھنٹوں کی بات چیت کے بعد یہ فیصلہ کیا گیا کہ ٹی آر ایس کے کسی قائد کو بھی دہلی روانہ نہیں کیا جائے گا۔

 ٹی آر ایس ذرائع کے مطابق کے سیآر نے پہلے ہی ممتابنرجی کو اجلاس میں کانگریس کو مدعو کرنے پر اپنا اعتراض درج کرایا تھا۔ کے سی آر کی زیر قیادت پارٹی نے پہلے ہی یہ واضح کردیا تھا کہ ریاست میں کانگریس، ان کی حریف پارٹی ہے اور کانگریس کے ساتھ کسی بھی مقام پر پلاٹ فارم شیئر نہیں کریں گے۔

حکمراں جماعت کے قائد نے گذشتہ ماہ راہول گاندھی نے اپنے دورہ کے دوران ٹی آر ایس کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے بی جے پی کے خلاف لب کشائی نہ کرنے پر بھی ناخوشی کااظہار کیا۔ٹی آر ایس قیادت کا ایقان ہے کہ کانگریس پر بھروسہ نہیں کیا جاسکتا ہے۔ پارٹی کا ایقان ہے کہ کانگریس نے 2019 کے لوک سبھا انتخابات اور حلقہ اسمبلی حضور آباد کے ضمنی الیکشن میں کانگریس کا بی جے پی کا خفیہ ناپاک کٹھ جوڑ رہا ہے۔

کانگریس نے خود اپنی قربانی دیتے ہوئے بی جے پی کی کامیابی کے لئے کام کیا ہے۔نمائندہ منصف کے مطابق ٹی آر ایس کے سربراہ چیف منسٹر تلنگانہ کے چندر شیکھر راؤ جو بی جے پی کے متبادل کیلئے قومی سیاسی میں سرگرم رول ادا کرنے کا اعلان کرچکے ہیں، نے صدارتی الیکشن کیلئے اپوزیشن جماعتوں کی حکمت عملی پر غور وخوض کے لئے ممتا بنرجی کی جانب سے طلب کردہ نئی دہلی کے اجلاس میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

کے سی آر نے ممتا بنرجی کو پیام روانہ کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کے صدارتی امیدوار کے خلاف اپوزیشن کے مشترکہ امیدوار کے نام کو قطعیت دینے کی بابت طلب کردہ اجلاس میں کانگریس کو مدعو کرنے پر انہیں اعتراض ہے۔

ٹی آر ایس نے اپنے موقف کا اظہار کرتے ہوئے اپوزیشن کی مساعی پر پانی پھیر دیا۔ اپوزیشن جماعتیں، بی جے پی کے خلاف متحدہ امیدوار کھڑا کرنے کی مساعی انجام دے رہی ہیں مگر کے سی آر کے اس اقدام سے اپوزیشن میں پھوٹ پڑتی نظر آرہی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button