عوام کو رکاوٹوں سے پاک خدمات کی فراہمی کی ضرورت: وزیر اعظم

وزیر اعظم نریندر مودی نے آج یہاں کہا ہے کہ ہمارے ملک میں ناہی شاہی نظام ہے اور نہ ہی شاہی تخت ہیں‘اس لئے ہم کو صورتحال کے پیش نظر اقدامات کرنے ہوں گے۔

نئی دہلی: وزیر اعظم نریندر مودی نے آج یہاں کہا ہے کہ ہمارے ملک میں ناہی شاہی نظام ہے اور نہ ہی شاہی تخت ہیں‘اس لئے ہم کو صورتحال کے پیش نظر اقدامات کرنے ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا ہے کہ ہمارے ملک میں شاہی نظام نہیں ہے اور ہزاروں سال کی روایت اب برقرار نہیں رہی۔اب عام آدمی کی ضرورتوں کو پیش نظر کام کرنا پڑے گا۔ وزیر اعظم نے ان تاثرات اور احساسات کا اظہار ”سیول سرویس ڈے“ کے موقع پر عوامی انتظامیہ میں شاندار خدمات پر ایوارڈ کی پیشکشی کے بعد کیا۔

مودی نے کہا کہ ہمارا مقصد یہ ہے کہ عام آدمی کی زندگی میں تبدیلی لائی جائے اور عوام کو کسی بھی قسم کی دشواریاں یا مسائل درپیش نہ ہو۔انہوں نے کہا کہ عوام کی زندگی آسان رہے اور عام آدمی کو حکومت کے ساتھ معاملتوں میں کوئی جد وجہد کی ضرورت پیش نہ آئے۔

انہوں نے کہا کہ بغیر کسی رکاوٹ کے عوام کو فوائد اور خدمات حاصل رہیں۔انہوں نے کہا کہ ملک کا جمہوری نظام اس طرح ہے کہ کسی شخص کو اپنے مقاصد کی تکمیل میں کوئی دشواریاں پیش نہ آئے۔ انہوں نے ایوارڈ ویننگ پراجکٹ کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ اضلاع میں بھی اسکیمات کو روبہ عمل لایاجارہاہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ آئندہ سال’سیول سرویس ڈے‘کے تعلق سے موجودہ حالات کے تجربات کو پیش نظر رکھا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ملک کے جمہوری نظام کو تین مقاصد کے تحت روبہ عمل لایاجانا چاہئے۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان کے حالات میں تبدیلی آتی جارہی ہے۔اگر ہم عالمی سطح کو پیش نظر نہ رکھیں تو اس سے ہمارے مقاصد کی تکمیل نہیں ہوگی۔

ہماری ترجیحات اور نقطہ نظر کو پیش نظر رکھتے ہوئے کام کرنا ہوگا۔اسکیمات کو فروغ دیتے ہوئے ترقیاتی اقدامات کی راہ ہموار کی جاسکتی ہے۔وزیر اعظم نے تیسرے مقصد کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ملک کی سالمیت اور اتحادکو برقرار رکھاجائے۔ اس تعلق سے کوئی مفاہمت نہیں ہوسکتی۔

حکومت کی کارکردگی کو بہتر بنانے کیلئے اصلاحات کی جاتی ہیں جوکہ حالات کو پیش نظر رکھتے ہوئے مرتب کی جاتی ہے۔ملک کے بدلتے ہوئے حالات کو پیش نظر رکھتے ہوئے ہم کو کام کرنا ہوتاہے۔

ہم کو چاہئے کہ ایسے اقدامات کریں جوکہ ناصرف ملک کی ترقی کی راہ ہموار کرسکیں بلکہ عوام کو اپنے مسائل کے حصول میں کوئی رکاوٹیں پیش نہ آئیں۔ 20-22کیلئے سیول سرونٹس کے ساتھ بات چیت کا تذکرہ کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ انہوں نے چیف منسٹر کی حیثیت سے بھی سیول سرونٹس کی کارکردگی کا جائزہ لیا تھا۔

انہوں نے انتظامیہ کے عہدیداروں سے کہا ہے کہ وہ اس سلسلہ میں موثر اقدامات کرے تاکہ حرکیاتی عہدیداروں کی خدمات سے استفادہ کیا جاسکے۔انہوں نے اس طرح کے تاثرات کا اظہار ورچول طورپر کیا ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button