مرکز اور اتراکھنڈ کی سابق حکومتوں پر ناکام پالیسیوں کا الزام: نریندر مودی

وزیر اعظم نریندر مودی نے الزام عائد کیا کہ کانگریس حکومتوں کی جانب سے پراجکٹس کو روبہ عمل لانے میں تاخیرکی وجہ سے عوام اتراکھنڈ سے نقل مقام کرنے کے لئے مجبور ہوگئے۔

ہلدوانی / دہرادون: وزیر اعظم نریندر مودی نے آج یہاں مرکز اور اتراکھنڈ کی کانگریس حکومتوں کو الزام عائد کیا کہ ترقیاتی اقدامات میں ناکامی کی وجہ عوام کو مسائل اور مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی نے الزام عائد کیا کہ کانگریس حکومتوں کی جانب سے پراجکٹس کو روبہ عمل لانے میں تاخیرکی وجہ سے عوام اتراکھنڈ سے نقل مقام کرنے کے لئے مجبور ہوگئے۔

وزیر اعظم نے اِن تاثرات اور احساسات کا اظہار ہلدوانی میں 17,500 کروڑ روپے سے زائد مالیت کے پراجکٹس کا سنگ بنیاد رکھتے ہوئے کیا۔ اِن پراجکٹس میں ہمہ مقصدی لکھوار پراجکٹ بھی شامل ہے جو کہ 5,747 کروڑ روپے کی لاگت سے روبہ عمل لایا جائے گا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ لکھوار پراجکٹ جو کہ 1974ء میں شروع کیا گیا تھا، لیکن اِس پر عمل آوری کے لئے تقریباً 48 برس درکار ہوئے۔ انہوں نے کہا کہ حکومتوں کی جانب سے پراجکٹس پر عمل آوری میں تاخیر کی وجہ سے ترقیاتی اقدامات میں رکاوٹ پیدا ہوتی رہی۔

یہ سابق حکومتوں کی ناکام پالیسیوں اور غلطیوں کا نتیجہ ہے کہ عوام کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ ایم بی انٹر کالج گراؤنڈ ہلدوانی میں ایک انتخابی ریالی کو مخاطب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے ان تاثرات اور احساسات کا اظہار کیا۔

مودی نے 3,420 کروڑ روپے مالیت کے 6 پراجکٹس کا افتتاح کیا اور 17 دوسرے پراجکٹس کے لئے سنگ بنیاد رکھا جس پر 14,127 کروڑ روپے خرچ ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت عوام کو ممکنہ سہولتیں فراہم کرتے ہوئے ترقیاتی اقدامات کی خواہاں ہے۔

وزیر اعظم کی جانب سے مختلف مقامات پر پراجکٹس کا افتتاح اور سنگ بنیاد عمل میں لایا گیا۔ وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ حکومت برقی کی سربراہی کو بھی بہتر بنانے کی خواہاں ہے، اس مقصد کے لئے مختلف اقدامات کئے جارہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ لکھوار ہمہ مقصدی پراجکٹ سے 300 میگا واٹ برقی اور 330 ملین مکعب میٹرس پانی کی پیداوار ہوگی اور یہ آبپاشی کے علاوہ اتراکھنڈ ٹاؤن ہماچل پردیش، ہریانہ، اترپردیش اور راجستھان کے علاوہ دہلی کی ریاستوں کو پینے کے لئے سربراہ کیا جائے گا۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button