ملک کے حالات کا مقابلہ کرنے جمعیۃ اپنی ذمہ داری ادا کرے گی: مولانا محمود مدنی

مولانا محمود مدنی نے کہا کہ محض الیکشن کی خاطر نفرت کی بیج بوئے جارہے ہیں۔ ایسے وقت میں جمعیۃ علمائے ہند کو اپنی ذمہ داری پوری کرنی ہوگی اور حالات کا مقابلہ کرنا ہوگا۔ ایسا لائحہ عمل طے کرنا ہوگا جس کے ذریعہ باہمی منافرت کی فضا ختم ہوسکے۔

کولکتہ / نئی دہلی: کولکتہ میں آج جمعیۃ العلماء کی قومی مجلس عاملہ کے اجلاس کی آخری نشست زیرصدارت مولانا محمود مدنی منعقد کی گئی۔ مولانا محمود مدنی نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ جمعیۃ علماءِ ہند کا اصل کام ملک وملت کی فکری رہنمائی ہے۔ آزادی سے قبل اور مابعد تقسیم ہند جمعیۃ نے اپنی ذمہ داری بخوبی نبھائی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج ملک کی صورتِ حال کافی تشویشناک ہے۔ ملک میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذاتِ اقدس پر کھلے عام گستاخی کے باوجود کوئی کارروائی نہیں ہوئی۔

 انہوں نے کہا کہ محض الیکشن کی خاطر نفرت کی بیج بوئے جارہے ہیں۔ ایسے وقت میں جمعیۃ علمائے ہند کو اپنی ذمہ داری پوری کرنی ہوگی اور حالات کا مقابلہ کرنا ہوگا۔ ایسا لائحہ عمل طے کرنا ہوگا جس کے ذریعہ باہمی منافرت کی فضا ختم ہوسکے اور غلط فہمیوں کا ازالہ ہوسکے۔ اجلاس میں طے کیا گیا کہ سیرتِ نبویؐ و دیگر مسائل پر رسالے اور مختصر ویڈیوز تیار کیے جائیں اور قدیم شعبہ دعوتِ اسلام کا احیاء کیا جائے۔ اجلاس میں اہانت رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے مرتکبین کے لیے باضابطہ سزا دلانے سے متعلق قانونی اقدام کا جائزہ لیا گیا۔

 مجلس عاملہ میں مسلم دشمن عناصر کی سرکاری حمایت اور حوصلہ افزائی پر کڑی تنقید بھی کی گئی۔ اجلاس میں مولانا محمود مدنی صدر جمعیۃ علمائے ہند کے علاوہ مولانا حکیم الدین قاسمی، مفتی ابوالقاسم نعمانی، مولانا رحمت اللہ کشمیری، مفتی محمد سلمان منصور پوری، مولانا صدیق اللہ چودھری اور دیگر نے شرکت کی۔

ذریعہ
پریس نوٹ

تبصرہ کریں

Back to top button