ممبئی ایرپورٹ پر احتیاطی اقدامات

موجودہ رہنما خطوط کے مطابق یوروپ اور دیگر 11 ملکوں سے آنے والے مسافرین کا معائنہ کیا جائے گا اور پازیٹیو پائے جانے پر ان کے نمونوں کو جینومک سیکوئنسنگ کے لیے بھیجا جائے گا۔

ممبئی: کووڈ19 کی نئی شکل اومیکرون کے خطرہ کے پیش نظر اور گزشتہ چند دنوں کے دوران 6 مسافرین کے کورونا سے متاثر پائے جانے کے بعد چھترپتی شیواجی مہاراج انٹرنیشنل ایرپورٹ پر ”انتہائی جوکھم والے“ ملکوں سے آنے والے مسافرین کو الگ کرنے کا آغاز کردیا گیا۔

گزشتہ چند دنوں کے دوران جنوبی افریقہ کے دو اور دیگر جوکھم والے ملکوں کے4بین الاقوامی مسافرین کے کووڈ19سے متاثر پائے جانے کے بعد یہ فیصلہ کیا گیا۔

ریاستی حکومت کے عہدیدار کے مطابق ممبئی‘ کلیان ڈومبیولی اور میرا بھائندر اور پونے سے ایک ایک شخص اور دیگر پمپری چنچواڑ سے متاثر پائے گئے۔ اگرچیکہ سبھی پازیٹیو پائے گئے مگر وہ یا تو غیرعلاماتی ہیں یا پھر ان میں ہلکی علامات ہیں، مگر ان کے نمونوں کو جینیٹک سیکوئنسنگ کے لیے بھیج دیا گیا اور ان کے رابطوں کا پتا لگایا جارہا ہے۔

موجودہ رہنما خطوط کے مطابق یوروپ اور دیگر 11 ملکوں سے آنے والے مسافرین کا معائنہ کیا جائے گا اور پازیٹیو پائے جانے پر ان کے نمونوں کو جینومک سیکوئنسنگ کے لیے بھیجا جائے گا۔

سی ایس ایم آئی اے نے بھی بین الاقوامی مسافرین کے لیے48رجسٹریشن کاؤنٹرس پر آر ٹی پی سی آر معائنوں کی خاطر خواہ سہولتوں اور 40نمونوں کے بوتھس کا انتظام کیا ہے۔ اس کے علاوہ معائنہ کی غرض سے تین لیابس لائف نیٹی، سب اربن ڈائگناسٹکس اور اکیو ایم ڈی ایکس (مائی لیابس) قائم کیے گئے ہیں۔

مختصر وقفوں کے ساتھ مربوط کرنے والی فلائٹس میں سوار ہونے والے مسافرین کے لیے موجودہ عام آر ٹی پی سی آر کے علاوہ 30ریاپڈ پی سی آر مشینیں دستیاب کرائی گئی ہیں اور ضرورت پڑنے پر سہولتوں کی مزید تجدید کی جائے گی۔ جن مسافرین نے آر ٹی پی سی آر معائنوں کو پہلے سے آن لائن بک نہیں کیا، ان کے لیے آمد کے راستے میں مختلف مقامات پر کیو آر کوڈس ڈسپلے کیے گئے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button