نواب ملک 21/ مارچ تک عدالتی تحویل میں

عدالتی تحویل میں دیے جانے کے عدالتی احکام کے بعد انہیں جنوب وسطی ممبئی کی آرتھر روڈ جیل بھیجا جائے گا۔ ذرائع نے کہا کہ آرتھر روڈ جیل میں خصوصی انتظامات کیے گئے جہاں انہیں رکھا جائے گا۔ سابق وزیر داخلہ انل دیشمکھ بھی اسی جیل میں ہیں اور جبری وصولی اور دیگر الزامات کا سامنا کررہے ہیں۔

ممبئی: خصوصی پی ایم ایل اے عدالت نے مہاراشٹرا کے کابینی وزیر اور این سی پی لیڈر نواب ملک کو منی لانڈرنگ کیس کے ضمن میں 21/ مارچ تک عدالتی تحویل میں بھیج دیا گیا۔ قبل ازیں وہ انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ کی تحویل میں تھے۔ ملک کو ای ڈی نے 23/ فروری کو گرفتار کیا تھا ااور پی ایم ایل اے عدالت نے انہیں 3/ مارچ تک ای ڈی کی تحویل میں دیا تھا جسے بعد ازاں بڑھا کر7/ مارچ کردیا گیا۔

 انہیں بھاری پولیس بندوبست میں، ای ڈی کے عہدیداروں اور سی آر پی ایف کے اہلکاروں کے ہمراہ سیشن جج آر کے روکڈے کے روبرو پیش کیا گیا۔ انہیں 25تا28فروری جے جے ہاسپٹل میں بھی شریک کرایا گیا۔ اس دوران ان کا بیان قلمبند نہیں کیا جاسکا لہٰذا کی تحویل میں عدالت نے ایک بار پھر توسیع کردی۔

عدالتی تحویل میں دیے جانے کے عدالتی احکام کے بعد انہیں جنوب وسطی ممبئی کی آرتھر روڈ جیل بھیجا جائے گا۔ ذرائع نے کہا کہ آرتھر روڈ جیل میں خصوصی انتظامات کیے گئے جہاں انہیں رکھا جائے گا۔ سابق وزیر داخلہ انل دیشمکھ بھی اسی جیل میں ہیں اور جبری وصولی اور دیگر الزامات کا سامنا کررہے ہیں۔

 وباء سے متعلق جیل کے قواعد کے مطابق جیل بھیجنے سے قبل ملک کو پہلے دو دنوں کے لیے کووڈ معائنہ کے لیے قرنطین مرکز میں رکھا جائے گا۔ دریں اثناء بامبے ہائی کورٹ بھی ملک کی درخواست کی سماعت کرنے والی ہے جس میں انہوں نے ای ڈی کے ذریعہ اپنی گرفتاری کو غیرقانونی قرار دیا گیا اور اسے ریا چکرورتی کی گرفتاری کے بعد سے مرکزی ایجنسیوں کے بیجا استعمال پر ان کی کھل کر تنقید کو وجہ قرار دیا۔

ذریعہ
یو این آئی

تبصرہ کریں

Back to top button