وجئے واڑہ میں عصمت ریزی کی متاثرہ کی کونسلنگ کا دلچسپ موڑ، چندرابابو کو خواتین کمیشن کی نوٹس

اسپتال میں چندرابابونائیڈو، صدر نشین خواتین کمیشن اومامہیشورراو اور پدما کے درمیان گرما گرم بحث ہوئی۔ منگل گری میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے پدما نے الزام لگایا کہ چندرابابونائیڈو نے اسپتال میں ان کے ساتھ دھمکی آمیز انداز میں بات کی۔

حیدرآباد: سرکاری اسپتال وجئے واڑہ(آندھراپردیش) میں عصمت دری کی متاثرہ کی کونسلنگ نے دلچسپ موڑلے لیا ہے کیونکہ آندھراپردیش خواتین کمیشن نے سابق چیف منسٹر این چندرابابونائیڈو اور تلگودیشم کے سابق رکن اسمبلی بونڈاوینکٹیشورراو کو خواتین کمیشن کی صدرنشین واسی ریڈی پدما کے ساتھ اسپتال میں بحث وتکرار پرنوٹس جاری کی ہے۔

23سالہ ذہنی طورپر متاثرہ لڑکی کی اسپتال میں تین دن قبل تقریبا 30گھنٹے تک محروس رکھتے ہوئے اجتماعی عصمت ریزی کی گئی تھی۔ نائیڈو جو تلگودیشم کے قومی صدر ہیں، اومامہیشورراو کے ساتھ استپال پہنچے تاکہ متاثرہ سے ہمدری کا اظہار کیاجاسکے۔انہوں نے اس کے لئے پانچ لاکھ روپئے کی مالی مددکا اعلان کیا۔

اسی دوران خواتین کمیشن کی صدرنشین بھی اسپتال پہنچ گئیں۔اس موقع پر اسپتال میں چندرابابونائیڈو، اومامہیشورراو اور پدما کے درمیان گرما گرم بحث ہوئی۔ منگل گری میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے پدما نے الزام لگایا کہ چندرابابونائیڈو نے اسپتال میں ان کے ساتھ دھمکی آمیز انداز میں بات کی۔ انہوں نے الزام لگایا کہ سابق چیف منسٹر اجتماعی عصمت ریزی کے معاملہ کو سیاسی فائدہ کیلئے اٹھارہے ہیں۔

انہوں نے سوال کیا کہ چندرابابو تلگودیشم کے سینکڑوں کارکنوں کے ساتھ اسپتال کیوں پہنچے تھے۔ چندرابابو کی قیادت میں تلگودیشم کے کارکنوں نے اسپتال میں تصادم کی صورتحال پیدا کی اور عصمت ریزی کی متاثرہ،ان کے دلائل اور وارڈ میں شوروغل کے سبب خوفزدہ ہوگئی۔ پدما نے دعوی کیا کہ متاثرہ کا خاندان چاہتا تھا کہ اس کے ساتھ شخصی طورپر بات کی جائے۔

خواتین کمیشن نے چندرابابواور اومامہیشورراو کو نوٹس جاری کرتے ہوئے ان کو ہدایت دی کہ 27اپریل کو وہ کمیشن کے سامنے حاضر ہوں اور نامناسب رویہ کے ساتھ ساتھ،دھمکی آمیز انداز میں بحث وتکرار کرنے کی وضاحت کی جائے۔

ذریعہ
یواین آئی

تبصرہ کریں

Back to top button